’’چلغوزے‘‘ سردیوں کی سوغات

0
27

چلغوزوں کی یاد جس شدت سے سردیوں میں آتی ہے، کسی اور موسم میں نہیں آتی لیکن چلغوزوں کی آسمان سے باتیں کرتی قیمت نے اسے نچلے طبقے تو کیا متوسط طبقے کی دسترس سے بھی تقریباً دور کردیاہے۔ بہر حال چلغوزے آپ کے پاس ہیں تو اس کے کئی فائدے بھی آپ پاسکتے ہیں۔ چلغوزے اپنی افادیت کی وجہ سے بہت مقبول تھے جبکہ امریکا میں اس کی کاشت 10ہزار سال سے کی جارہی ہے۔
یہ پائن کےبیج ہوتے ہیں لیکن پائن درخت کی تمام اقسام چلغوزے پیدا نہیں کرتیں، صرف 20 اقسا م ایسی ہیں جن کے چلغوزے آپ ذوق و شوق سے کھا سکتے ہیں۔ چلغوزے کو تیار ہونے میں18مہینے لگتے ہیں اور کچھ اقسام میں تو تین سال بھی لگ جاتے ہیں۔ ان کی کلیاں کِھلنے سے دس دن پہلے انہیں اُتار لیا جاتاہے۔ چلغوزوں کا سائنسی نام Pinus gerardiana ہے، اس کے درخت مشرقی افغانستان، پاکستان اور شمال مغربی ہندوستان میں پائے جاتے ہیں، جو 1800 سے 3350میٹرکی بلندی پر اُگتے ہیں۔
توانائی کی تعمیر
چلغوزوں میں موجود مخصوص غذائی اجزا جیسے کہ مونوسیچوریٹڈ فیٹس، آئرن او ر پروٹین توانائی بڑھانے میں مدد کرتے ہیں۔ ان میں موجود میگنیشیم اور کچھ دیگر غذائی اجزا تھکن سے بچانے اور جسم میں خلیوں کی مرمت کرنے کے کام آتے ہیں۔
چلغوزے کے فوائد
چلغوزےمیں فیٹی ایسڈز ہوتے ہیں، جو بھوک بڑھانے کے ساتھ ساتھ وزن کم کرنے کیلئے بھی فائدہ پہنچاتے ہیں۔ ان میں موجو د میگنیشیم اور پروٹین دل کے امراض اور ذیا بطیس سے بچنے میںمدد کرتے ہیں۔ جسم کوتوانائی دینے کے علاوہ ان میں موجود اینٹی آکسیڈنٹس حمل میں، قوتِ مدافعت بڑھانے، بینائی، بالوں اور جِلد کی صحت کیلئے فائدہ مند ہیں۔
ذیابطیس میں فائدہ مند
اگر آپ روزانہ چلغوزے کھا رہے ہیں تو آپ کو ذیابطیس ٹائپ ٹو کنٹرول کرنے میںمدد مل سکتی ہے۔ تحقیق کے مطابق بینائی کم ہونے کی پیچیدگیوں اور اسٹروک سے بھی چلغوزے محفوظ رکھتے ہیں۔ ذیا بطیس ٹائپ ٹو کے مریض جو چلغوزے روزانہ کھاتے تھے ان میں گلوکوز کنٹرول کرنے کی سطح بہتر اور برے کولیسٹرول کی سطح کم دیکھی گئی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here