دیکھئے مسلم ڈیلیوری بوائےکا نام سن کر کیا ہوا۔ کتنا شرمناک ہے یہ

0
13
یہ دیکھئے مسلم ڈلیوری بوائےکا نام سن کر کیا ہوا۔ کتنا شرمناک ہے یہ
س وقت ملک میں مسلمانوںکے لئے نفرت کی آگ چاروں طرف پھیلی ہوئی ہے۔لیکن یہ انتہا ہے کہ مسلم ڈلیوری بوائے کا نام سن کر کوئی کھانا لینے سے انکار کردے۔حیدراآباد میں ایک لڑکا جب سوئیگی کی جانب سےایک کسٹمر کو ڈلیوری دینے گیا تو اس نے نام پوچھ کر آرڈر لینے سے انکار کردیا۔لڑکے نے اس معاملہ کو پولیس کے سامنے رکھا اور شکایت درج کرائی پولیس انسپکٹر پی شرینواس نے کہا کہ سوئیگی کے ملازم مدثر سلیمان نے بدھ کو ایک شکایت کی تھی ۔ اس کا کہنا تھا کہ ایک کسٹمر نے آرڈر کیا اور پھر جب ڈیلیوری بوائے مسلم نکلا تو اس نے آرڈر لینے سے منع کردیا

اس وقت ملک میں مسلمانوں کے لئے نفرت کی آگ چاروں طرف پھیلی ہوئی ہے۔لیکن یہ انتہا ہے کہ مسلم ڈیلیوری بوائے کا نام سن کر کوئی کھانا لینے سے انکار کردے۔حیدرآباد میں ایک لڑکا جب سوئیگی کی جانب سےایک کسٹمر کو ڈیلیوری دینے گیا تو اس نے نام پوچھ کر آرڈر لینے سے انکار کردیا۔لڑکے نے اس معاملہ کو پولیس کے سامنے رکھا اور شکایت درج کرائی پولیس انسپکٹر پی شرینواس نے کہا کہ سوئیگی کے ملازم مدثر سلیمان نے بدھ کو ایک شکایت کی تھی ۔ اس کا کہنا تھا کہ ایک کسٹمر نے آرڈر کیا اور پھر جب ڈیلیوری بوائے مسلم نکلا تو اس نے آرڈر لینے سے منع کردیا ۔اس پر سوئگی نے بھی سخت رد عمل کا اظہار کیا ہے ۔
اس شخص نے خاص طور پر کہا تھا کہ ہندو لڑکے کو ڈیلیوری کے لئے  بھیجیں  ، لیکن سوئیگی نے ڈیلیوری پارسل مسلم لڑکے کے ہاتھ سے بھیج دیا ، جس کی وجہ سے کسٹمر نے آرڈر لینے سے انکار کردیا ۔   ۔ڈیلیوری بوائے نے یہ معاملہ مسلم تنظیم مجلس بچائو تحریک کے سربراہ امجد اللہ خان کے سامنے اٹھایا ، جنہوں نے اپنے ٹویٹر اکاونٹر پر اس معاملہ کو شیئر کیا ۔ انہوں نے بتایا کہ کسٹمر نے چکن 65 کا آرڈر کیا تھا اور کہا تھا کہ ہندو ڈیلیوری بوائے کو بھیجے ، لیکن سوئیگی نے ڈیلیوری پارسل مسلم لڑکے کے ہاتھ سے بھیج دیا ، جس کی وجہ سے کسٹمر نے آرڈر لینے سے انکار کردیا ۔حیرت کی بات یہ ہے کہ کسٹمر نے جس ریسٹورینٹ سے آرڈر کیا تھا ، اس کو بھی ایک مسلمان شخص ہی چلاتا ہے۔پھر یہ کیا فضول بات ہے کہ گڑ کھائیں گلگلوں سے پرہیز کریں۔لیکن یہ لمحہ فکریہ ہے اگر ملک میں اسی طرح نفرت پھیلتی گئی تو سول وار ہی نہ چھڑ جائے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here