مظفر پور ریلوے اسٹیشن کا حادثہ۔ایس ڈی پی آئی کی مدد

2
31
مظفر پور ریلوے اسٹیشن کا حادثہ۔ایس ڈی پی آئی کی مدد
مظفر پور ریلوے اسٹیشن کا حادثہ۔ایس ڈی پی آئی کی مدد
سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا  بہار شاخہ کے ایک وفدنے مظفر پور ریلوے اسٹیشن پر جان بحق ہونے والی خاتون کے گاؤں سری کول، اعظم نگر پہنچ کر ان کے اہل خانہ سے ملاقات کی۔ واضح رہے کہ لاک ڈاؤن کی وجہ سے ملک بھر میں لاکھوں مہاجر مزدور متاثر ہورہے ہیں۔ ایک ایسا ہی المناک حادثہ گزشتہ دنوں ایک خاتون مہاجر مزدور کے ساتھ مظفر پور ریلوے اسٹیشن پر ہوا تھا، جس میں شدید پیاس اور بھوک سے دوچار ایک عورت مظفر پور ریلوے اسٹیشن پر دم توڑ گئی تھی اور اس کا چھوٹا بچہ اس کے دوپٹہ کو کھینچ کر اپنی ماں کو جگانے کی کوشش کررہا تھا، اس واقعے کی چونکا دینے والے تصاویر نے انسانیت کو شرمسار کردیا تھا۔ اس واقعے کی اطلاع ملنے کے بعد ایس ڈی پی آئی بہار شاخہ کے ریاستی صدر نسیم اختر کی قیادت میں ایک وفد نے متوفی خاتون کے گاؤں پہنچ کر ان کے اہل خانہ سے ملاقات اور پورے واقعے کی تفصیلات حاصل کی۔ اہل خانہ سے ملاقات کے بعد ایس ڈی پی آئی ریاستی صدر نسیم اختر نے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ اتنے بڑے واقعے کے بعد بھی کٹیہار انتظامیہ کا کوئی سینئر عہدیدار کل تک نہ متوفی کے اہل خانہ سے ملا ہے اور نہ ہی لواحقین کو مرکزی و ریاستی حکومت کی طرف سے امداد کی کوئی یقین دہانی کی گئی ہے۔ نسیم اختر نے مزید کہا کہ اس سلسلے میں پارٹی کی وفد ضلعی انتظامیہ سے ملاقات کرکے بچوں کے بہتر مستقبل کیلئے معاوضہ اور دیگر امداد پر مشتمل مطالبات رکھیں گے۔ وفد کو بتایا گیا کہ متوفی خاتون کا نام ارمینہ خاتون ہے اورپچھلے دو سال قبل اس کے شوہر نے اس کو طلاق دیدیا تھا۔ دو بچوں کا نام ارمان اور رحمت ہے اور دونوں بچے فی الحال ان کے نانا میر بوکا کے پاس ہیں۔ وفد میں کٹیہار ضلعی صدر محمد جمید، ضلعی جنرل سکریٹری قمر دانش اور ضلعی سکریٹری ضیاء الحق شریک تھے

2 COMMENTS

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here