وزیراعظم نریندر مودی اس بار پی ایم نہیں بن پائیں گے

0
18

دہلی کے وزیراعلیٰ کی پیشین گوئی، کہا:بی جے پی کو ۲۰۰؍ سے بھی سیٹیں ملیں گی

حیدرآباد:دہلی کے وزیراعلیٰ و عام آدمی پارٹی کے کنوینر اروند کیجریوال نے پیشن گوئی کی ہے کہ مودی اس مرتبہ وزیراعظم نہیں بنیں گے اور ان انتخابات میں بی جے پی ۲۰۰؍ سے کم نشستوں پر کامیابی حاصل کرے گی۔ کیجریوال جنہوں نے اے پی کی حکمران جماعت تیلگودیشم کے لیے انتخابی مہم چلائی، اس موقع پر چندرابابو نائیڈو کے ساتھ ایک پرائیویٹ ٹی وی چینل کو دیئے گئے انٹرویو میں الزام لگایا کہ ملک میں مودی اور امت شاہ کی آمرانہ طرز کی حکومت ہے۔ اس کے خلاف تمام مخالف جماعتیں جدوجہد کر رہی ہیں۔ ملک کو مودی اور امت شاہ کی جوڑی سے بچانا ہے جس کے لیے جو کچھ بھی کرنا پڑے ہم اس کے لئے تیار ہیں۔ دہلی، اے پی، مغربی بنگال کے لوگ متحد ہورہے ہیں۔ تمام کا یہ مقصد ہے کہ مودی اور امت شاہ کی جوڑی کا خاتمہ ہو۔ مودی نے وعدہ کے مطابق خصوصی درجہ نہ دیتے ہوئے اے پی کے عوام کے ساتھ دھوکہ کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ چندرابابو نے جدید آندھرا کی بنیاد ڈالی ہے جو ایک بڑاچیلنج تھا۔ انہوں نے کہا ’’اے پی کے ان کے ہم منصب این چندرابابونائیڈو ایک اور مرتبہ حقیقی رہنما بن کر ابھریں گے کیونکہ وہ عوام کو چاہتے ہیں‘‘۔ مرکز میں مخالف بی جے پی اتحاد کے قیام کے لیے چندرا بابو نائیڈو کی کوششوں میں ان کا ساتھ دینے والی مختلف جماعتوں کے لیڈران اے پی میں تیلگودیشم کے لیے انتخابی مہم چلانے کے لئے آگے آئے ہیں، اسی کے حصہ کے طو ر پر نیشنل کانفرنس کے سربراہ و جموں وکشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ نے بھی تیلگودیشم کے لئے انتخابی مہم چلائی تھی اور چندرابابو کے ساتھ روڈ شو میں حصہ لیتے ہوئے اس پارٹی کو کامیاب بنانے کی اپیل کی تھی۔ مرکز میں مخالف بی جے پی جماعتوں کے اتحاد میں شامل جماعتوں کے لیڈران یکے بعد دیگرے اب آندھراپردیش کا رخ کرتے ہوئے تیلگودیشم کے لئے مہم چلارہے ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ مغربی بنگال کی وزیراعلی ممتابنرجی بھی تیلگودیشم کے لیے انتخابی مہم چلائیں گی۔ کیجریوال نے اس انٹرویو کے دوران دوٹوک انداز میں واضح کیا کہ ریاست کی ۲۵؍لو ک سبھا نشستوں پر تیلگودیشم کامیاب ہوگی، اسی طرح دہلی کی تمام لوک سبھا نشستوں پر عام آدمی پارٹی کا قبضہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ چندرابابو ایک متحرک اور دوراندیش رہنما ہیں۔ غریبوں اور بے روزگاروں کے لیے ان کی جانب سے کی گئی فلاحی سرگرمیاں قابل ستائش ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here