۔کامیاب اور مشہور ہونے سے مطمئن اور خوش ہونازیادہ ضروری ہے۔

0
255
۔کامیاب اور مشہور ہونے سے مطمئن اور خوش ہونازیادہ ضروری ہے
۔کامیاب اور مشہور ہونے سے مطمئن اور خوش ہونازیادہ ضروری ہے

مطمئن اور خوش ہونازیادہ ضروری ہے بہ نسبت کامیابی اور مشہور ہونے کے۔۔یہ خیالات ہیں سرحد پار سے ایک بہت ہی مشہور و معروف ادیب کے ۔صدا ٹوڈے کو ان کی یہ تحریر بہت پسند آئی اس لئے یہاں لگائی جارہی ہے تاکہ سبھی استفادہ کریں۔صدا ٹوڈے ان کے اس خیال کی تائید کرتا ہے کہ کامیاب اور مشہور ہونے سے مطمئن اور خوش ہونازیادہ ضروری ہے

34 سالہ خوب رو جوان ،جس کے پاس دولت ،شہرت اور راحت و آرام کے تمام اسباب موجود تھے ۔لگاتار کامیابیوں کے بعد وہ خو د کو خوش نصیب انسان سمجھ رہا تھا اور اس وقت بالی ووڈ میں عروج کی سیڑھی پر قدم رکھ کر ہیرو سے سپر ہیرو بننے جارہا تھاکہ اچانک سب کچھ ختم ہوجاتا ہے اوراس کے گھر سے اس کی مردہ لاش ملتی ہے ۔۔۔وجہ ؟ڈیپریشن ،مایوسی اور ناامیدی ۔
ہم بات کررہے ہیں سوشانت سنگھ راجپوت کی ،جس نے ایک پُرتعیش زندگی کے باوجود آج خودکشی کرلی ۔دراصل ڈیپریشن اور تفکرات وہ بیماریاں ہیں جو آج کل حد سے زیادہ بڑھ رہی ہیں اورآپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ وہ کامیاب ترین شخصیات کہ جنہیں زمانہ اپنا آئیڈیل مانتا ہے اور ان کی طرح طرزِ زندگی اپنانے کا خواہاں ہے لیکن ۔۔وہ شخصیات بھی اپنی زندگی میں شدید ڈیپریشن کی شکار ہیں ۔بہت سارے افراد ایسے ہیں جو زندگی میں نامور بن کرایک بڑی کامیابی پاتولیتے ہیں لیکن ان کی ذہنی صحت درست نہیں ہوتی ۔سوال یہ ہے کہ انسان پوری زندگی جس چیز کے پیچھے اپنی ساری توانائی لگادیتا ہے تو پھر اس کے مل جانے کے بعد بھی وہ زندگی سے بیزار کیوں ہوجا تا ہے ،حالانکہ اس کی زندگی تو سب سے زیادہ شاندار ہونی چاہیے ؟
دراصل اس کے بہت سارے عوامل ہیں ۔ایک وجہ یہ ہے کہ ایسے افرادکو کوئی گائیڈ کرنے والا نہیں ہوتا۔دوسری وجہ مادیت پسندی میں رہتے رہتے ان کا اللہ پر ایمان اور بھروسا ختم ہوجاتا ہے ۔تیسری وجہ انہوں نے زندگی میں پیسہ تو بہت کمالیا ہوتا ہے لیکن اسٹریس مینجمنٹ،کرائسس مینجمنٹ اور زندگی کے مشکلا ت کا سامنا کیسے کرنا ہے ،یہ نہیں سیکھا ہوتا،نیز ان کو Well Being(خوش رہنے)کا تصوربھی نہیں معلوم ہوتااورانہیں خوش اورپر امن رہنانہیں آتا ۔چوتھی وجہ یہ ہے کہ بہت سے لوگوں کے تعلقات اچھے نہیں ہوتے اور خراب رشتوں کی یہ فکر انہیں اس قدر مایوس کردیتی ہے کہ وہ خودکشی کا بھاری قدم اٹھانے پر مجبور ہوجاتے ہیں۔
جدید ریسرچ کے مطابق دنیا میں ہر سال 8لاکھ افراد خودکشی کرتے ہیں۔ ہر 16 منٹ کے بعد ایک انسان خودکشی کررہا ہے۔17 سے 34 سال کے درمیان والے لوگوں میں مرنے کی وجوہات میں دوسری بڑی وجہ خودکشی ہے۔سب سے زیادہ خودکشی کے واقعات بدھ کے روزہوتے ہیں اورخودکشی کی تین بنیادی وجوہات میں سے ایک وجہ “ذہنی صحت (Mental Health)” ہے ۔”ذہنی صحت”کی خرابی کی بڑی وجہ ڈیپریشن ہے ،جس میں مبتلا شخص کو خودکشی کے خیالات زیادہ آتے رہتے ہیں ۔
بحیثیت ٹرینر اور ایڈوائزر پاکستان کے بے شمار اداروں میں میں نے اپنی خدمات دی ہیں ۔میں نے کئی اداروں میں نے یہ تجویز دی ہے کہ ہمیں Mental Healthاور Well Being ،ان دونوں مضامین کو ٹریننگ میں لازمی شامل کرلینا چاہیے تاکہ اہم عہدوں پر اپنی خدمات دینے والے افسران ذہنی صحت کے اعتبار سے مکمل تندرست اور خوش ہوں۔کیونکہ اکثر یہ دیکھا گیا ہے کہ انسان جب کئی طرح کی کامیابیاں حاصل کرلیتا ہے تو درمیانی عمر میں آکر وہ ذہنی پریشانیوں کا شکار ہوجاتا ہے اوراگروہ اپنی پریشانیوں پر کنٹرول اور انہیں منظم (Manage) کرنانہ سیکھے تو اس کی زندگی اجیرن بن جاتی ہے۔
ریسرچ یہ بھی بتاتی ہے کہ دنیا میں خودکشی کا زیادہ رجحان میڈیا اورشوبزسے منسلک لوگوں میں ہوتا ہے ،کیونکہ اس فیلڈ میں پیسہ اور گلیمربہت زیادہ ہوتا ہے لیکن اس کے ساتھ ساتھ ان لوگوں میں کھوکھلا پن بھی زیادہ ہوتا ہے ۔اسی طرح بڑے بزنس مین ، بیوروکریٹ اورکامیاب شخصیات میں بھی خودکشی کا رجحان زیادہ ہوتا ہے کیونکہ ان لوگوں کاکوئی مخلص دوست نہیں ہوتا ،یہ اپنی دِل کی بات کھل کر کسی کے ساتھ شیئر نہیں کرتے ۔یہ لوگ زندگی میں کامیابیاں تو شاید بہت سمیٹ لیتے ہیں لیکن انہی کامیابیوں کی وجہ سے وہ معاشرے سے کٹ کرتنہائی اختیار کرلیتے ہیں ،جبکہ Isolationاورتنہائی ،ذہنی بیماری کو مزیدتقویت دیتی ہے اور یہی چیز ان کی خودکشی کا سبب بنتی ہے۔
قابل غور بات یہ ہے کہ ہمارے معاشرے میں ہر گھر میں ایک نفسیاتی مریض موجود ہے اور ہر سات گھروں میں سے ایک گھر میں ایک ایسا مریض موجود ہے جس کو باقاعدہ علاج کی ضرورت ہے لیکن بدقسمتی سے یہاں کاونسلنگ او ر رہنمائی دینے والوں کی تعداد آٹے میں نمک کے برابر ہے۔ڈیپریشن اور دیگر ذہنی بیماریوں سے آگاہی کے لیے قاسم علی شاہ فاؤنڈیشن میں “سائیکالوجی ونگ” موجود ہے جہاں سے نفسیاتی بیماریوں کے علاج کے حوالے سے بے شمار ویڈیوز اور بلاگز سوشل میڈیا پر عوام کی آگاہی کے لیے شیئر کیے جاتے ہیں۔معاشرے میں بڑھتے ہوئے اس گھمبیر مسئلے کی بنیادی وجوہات پراگر نظر ڈالی جائے تو یہ بات عیاں ہوتی ہے کہ دراصل ہمیں خوشی (Happiness) کے اصل تصور کا علم نہیں۔ہم اپنی خوشی کو مادی چیزوں کے ساتھ جوڑلیتے ہیں ،حالانکہ خوشی کا تعلق اطمینان اور سکون کے ساتھ ہوتا ہے اور جب بھی اس کو مادی چیزوں کے ساتھ جوڑا جائے گا ،اس کا نتیجہ بھی بھیانک ہوگا۔
لہٰذا ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم سب اپنے اندر نعمتوں کی فراوانی کا احساس پیدا کرتے ہوئے ہر لمحہ اپنے رب کے شکرگزا ر ہوں اور زندگی جہاں ہے ،جیسی ہے ،اس کو انجوائے کرنا شروع کردیں تو یقیناً ان تمام خطرناک بیماریوں سے بچ سکتے ہیں جو انسان کو موت کی دہلیز تک پہنچادیتی ہیں

قاسم علی شاہ پاکستان

 

article by Qasim Ali shah Pakistan

Happiness and satisfaction is better than success and popularity

Sada Today web portal

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here