غزل

0
63

کتابوں میں جب اس کی تصویردیکھی
تو پھر ہم نے بھی اپنی تحریر دیکھی

تکلم میں الفاظ تھے شہد جیسے
مگر اس کی آنکھوں میں تحقیر دیکھی

زمانے کو ذردار کے ساتھ دیکھا
کبھی مفلسوں کی نہ توقیر دیکھی

ہے آنکھوں میں روشن چراغِ محبت
یہ ہے خواب جس کی نہ تعبیر دیکھی

بدلتی ہے تقدیر بھی جس سے عنبر
دعائوں میں ماں کی وہ تاثیر دیکھی

عارفہ مسعود عنبر مرادآباد

+919639595277

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here