غزل

0
18
غزل
الجھو نہ ہم سے گردشو! کمزور جان کے، ھم لوگ آج بھی ہیں بڑی آن بان کے۔

الجھو نہ ہم سے گردشو! کمزور جان کے
ھم لوگ آج بھی ہیں بڑی آن بان کے۔

ھم نے سہے ھیں لاکھوں ستم‌آسمان کے
رکھتے ہیں پھر بھی حوصلے اونچی اڑان کے۔

حق گوئی کی سزا میں زباں کٹ گئی تو کیا
چرچے ہیں ہر زبان پہ میری زبان کے۔

سڑکوں پہ آج بہتا ہے انسانیت کا خوں
حالات کیوں بدل گئے ہندوستان کے۔

ایسا نہ ہو کہ تجھ سے بڑھیں اور دوریاں
آ ختم کر دیں فاصلے سب درمیان کے۔

میراث کو بزرگوں کی رکھنا سنبھال کر
بچے یہ کہہ رہے ہیں مرے خاندان کے۔

Riyaz Saghar
9837383839

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here