غزل- سعودی عرب سے ۔دل آج وہی شہرِ وفا ڈھونڈ رہا ہے

0
198
غزل سعودی عرب سے ۔دل آج وہی شہرِ وفا ڈھونڈ رہا ہے
غزل سعودی عرب سے ۔دل آج وہی شہرِ وفا ڈھونڈ رہا ہے

غزل
خوشبوئے بہاراں کا پتہ ڈھونڈ رہا ہے
دل آج وہی شہرِ وفا ڈھونڈ رہا ہے

کچھ سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں پڑے ہیں
لمحہ کوئی پھر عہدِ وفا ڈھونڈ رہا ہے

ہر چشمِ فروزاں میں نِہاں ہے کوئی خواہش
ہر شخص یہاں اپنا خدا ڈھونڈ رہا ہے

اس شہرِ قفس رنگ سے گھبرا سا گیا ہوں
دِل اور کوئی آب و ہوا ڈھونڈ رہا ہے

یہ شہر اُسی کا ہے زمانے کو خبر ہے
وہ شخص جو خود اپنا پتہ ڈھونڈ رہا ہے

شب میں اُسے سورج کے نکلنے کی ہے امید
دیوانہ ہے پتھر میں خدا ڈھونڈ رہا ہے

بیزار سا رہتا ہے ظفرؔ دیکھ کے ہر روز
آئینہ کوئی چہرا نیا ڈھونڈ رہا ہےظفر

ظفر محمود ظفر

00966 508017263

Riyadh-11471. KSA

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here