غزل سرحد پار سے۔ زندگی کیا میں تجھے اچھی نہیں لگتی ہوں

0
40
غزل سرحد پار سے۔ زندگی کیا میں تجھے اچھی نہیں لگتی ہوں
غزل سرحد پار سے۔ زندگی کیا میں تجھے اچھی نہیں لگتی ہوں

غزل۔ سرحد پار سے

نہ جانے کس طرف اب یار لوگ رہتے ہیں
سمندروں کے کہیں پار لوگ رہتے ہیں

یہ اتنا شور یہاں کا تو ہو نہیں سکتا
وگرنہ گھر میں تو دو چار لوگ رہتے ہیں

ہوا اڑا کے مجھے لے بھی چل اسی جانب
ادھر جہاں مرے دلدار لوگ رہتے ہیں

یہ دل کی بستی تھی کوئی جلانے آیا تھا
میں چیخ اٹھی ،خبردار لوگ رہتے ہیں

سمندروں سےبھی شفاف آسماں سےعمیق
کہیں کہیں وہ چمکدار لوگ رہتے ہیں

عجیب دنیا ہے میری سمجھ سے بالاتر
ہر ایک سمت ہی دشوار لوگ رہتے ہیں

چلو بسائیں وہاں چل کے اک نئی دنیا
جہاں ہمارے طرفدار لوگ رہتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل سرحد پار سے

اشک پیتے ہوئے حد درجہ حسیں لگتی ہوں
مسکرانے کے سبب خندہ جبیں لگتی ہوں

کیسے ممکن ہے سر شاخ اگوں ازسر نو
میں کوئی بیج ہوں کیا زیر زمیں لگتی ہوں

میں کوئی بیج ہوں کیا زیر زمیں لگتی ہوں
کسی خوش باش علاقے کی مکیں لگتی ہوں

ٹوٹنا دل کا اسی ضرب سے ہو گا منسوب
خود سے ٹکرا کے ہراک بار وہیں لگتی ہوں

خالی کمرےمیں کہاں ہوتی ہے چھپنے کی جگہ
نقش دیوار کی صورت ہی کہیں لگتی ہوں

کیوں مجھے چھوڑ کے جانے کو ہوئی ہے بیتاب
زندگی کیا میں تجھے اچھی نہیں لگتی ہوں

رخشندہ نوید

Ghazal bY Rakhshanda Naveed

sada today web portal

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here