غزل ۔اس سے پہلے کہ میں ہی مر جاؤں۔۔یہ نہ دیکھوں کہ تو بدل جائے

0
68
غزل ۔اس سے پہلے کہ میں ہی مر جاؤں۔۔یہ نہ دیکھوں کہ تو بدل جائے
غزل ۔اس سے پہلے کہ میں ہی مر جاؤں۔۔یہ نہ دیکھوں کہ تو بدل جائے

غزل

آج پلا دو آنکھوں سے
دل بہلا دو آنکھوں سے

چند شرابی اچھے سے
شعر سنا دو آنکھوں سے

اپنوں سے شرمانا کیا
کچھ فرما دو آنکھوں سے

منہ سے پیار کی بات کرو
یا سمجھا دو آنکھوں سے

پیار کے جو بھی ہوتے ہیں
گر سکھلا دو آنکھوں سے

سوئی ہوئی مدت سے
پریت جگا دو آنکھوں سے

ناز کے دل میں چاہت کی
آگ لگا دو آنکھوں سے

………………….

غزل

دل کا ارمان سب نکل جائے
تیرے آنے سے دل بہل جائے

کہہ رہی ہے ہماری خاموشی
عشق کا اک چراغ جل جائے

اس سے پہلے کہ میں ہی مر جاؤں
یہ نہ دیکھوں کہ تو بدل جائے

اسکو سوچوں تو وہ چلا آئے
اس پہ جادو ہی میرا چل جائے

کل کبھی بھی نہ آئے میرے لئے
روز تجھکو کہوں تو کل جائے

دیکھ لے مجھ کو وہ محبت سے
پھر تو دنیا میری بدل جائے

ناز اس کے لئے سنورتی رہوں
جب وہ آئے تو دل مچل جائے

مانچسٹر )ناز خان)

Ghazals by naaz khan Manchester Uk

Sada Today web portal

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here