سیواسدن کالج برہان پور میں علامہ اقبال فن اور شخصیت پر توسیعی خطبہ

0
93
سیواسدن کالج برہان پور میں علامہ اقبال فن اور شخصیت پر توسیعی خطبہ
سیواسدن کالج برہان پور میں علامہ اقبال فن اور شخصیت پر توسیعی خطبہ
قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نئی دہلی کے مالی تعاون سے اور شعبۂ اردو فارسی سیواسدن کالج، برہان پورواردو ریسرچ سینٹر کے زیر اہتمام گذشتہ برسوں کی طرح اس سال بھی ایک توسیعی خطبہ ’ڈاکٹر علامہ اقبال فن اور شخصیت‘ کا انعقاد ۱؍مارچ ۲۰۲۱ء؁ کو اردو ریسرچ سینٹر میں کیا گیا۔ جس میں موہن لال سکھاڑیہ یونیورسٹی ادے پور، راجستھان کے صدر شعبۂ اردو ڈاکٹر حدیث انصاری نے ڈاکٹر علامہ اقبال کے فن اور شخصیت پر تفصیلی گفتگو کی۔ اس خطبہ میں سیوا سدن ایجوکیشن سوسائٹی کی صدر محترمہ تاریکا وریندسنگھ ٹھاکر صاحبہ،سیکڑیٹری ہنس مکھ لال زری والا، پرنسپل انیل کاپڑیا جی، شریک رہے۔ نظامت کے فرائض پروفیسر محمد الطاف انصاری نے بحسن و خوبی انجام دیئے۔
ابتداء میں مہمانان کا استقبال ڈاکٹر ایس ایم شکیل ،ڈاکٹر قیصر جمال، تنویر رضا برکاتی ، محمد عرفان، پروفیسر انیس پٹیل وغیرہ نے گلدستہ و شال دے کر کیا۔ ڈاکٹر انیل کاپڑیا نے استقبالیہ کلمات سے نوازا۔ ڈاکٹر ایس ایم شکیل نے اردو ریسرچ سینٹر اور شعبۂ اردو فارسی کی ادبی سرگرمیوں پر تفصیلی روشنی ڈالتے ہوئےقومی کونسل کی جانب سے ملنے والےتعاون کا بھی ذکر کیا۔ ساتھ ہی کونسل کا شکریہ بھی ادا کیا۔ آپ نے ڈاکٹر حدیث انصاری کا تعارف پیش کرتے ہوئے اس توسیعی خطبہ کی اہمیت و افادیت پر روشنی ڈالی۔
ڈاکٹر حدیث انصاری نے اپنے منفرد اندازِ بیان سے سامعین میں ایک ہلچل پیدا کردی۔ آپ نے اقبال کی شاعری اور شخصیت پر بھرپور تبصرہ کیا۔ موصوف نے کہا کہ اقبال کی شاعری ہمارے لئے مشعل راہ جو ہمیں انسانیت، محبت ،اتحاد اور حب الوطنی کا درس دیتی ہے۔
اپنے صدارتی خطبہ میں تاریکا سنگھ جی نے کہا کہ اقبال کا ساہیتہ ہمیں صحیح راہ دکھاتا ہے۔ وہ ہندوستانی تھے اور ہمیشہ رہیں گے۔ اس خطبہ میں ڈاکٹر عثمان انصاری ، ڈاکٹر اسرار اللہ انصاری کھنڈوہ، ڈاکٹر سنیل دکشت ، ڈاکٹر ارملا چوکسے، ڈاکٹر ونود کالے، ڈاکٹر راہل راٹھور، منیش پٹیل،شیخ فرحان، شیخ محسن کے ساتھ شعبۂ اردو کے طلبہ اور کشمیر سے آئے ریسرچ اسکالر بھی موجود تھے۔ اظہار تشکر کے فرائض ڈاکٹر قیصر جمال نے اداکئے۔ اس خطبے میں کووڈ ۱۹ جیسی مہلک مرض سے متعلق حکومت کی جانب سے جاری اصول و ضوابط پر مکمل عمل کیا گیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here