مسلمانوں کو اس الیکشن سے سبق لینے کی ضرورت:الفلاح فرنٹ

نئ دہلی، 25مئ (پریس ریلیز)آج الفلاح فرنٹ کی جانب سے جاری ایک پریس ریلیز میں فرنٹ کے صدر ذاکر حسین نے کہا کہ ملک کے ہندو انتہا پسندی اور شدت پسندی کے طرف مائل ہیں۔انہوں نے کہاکہ یہ حقیقت ہیکہ اس بار اکھیلیش یادو اور مایاوتی کی برادری بھی ہندتوا کے نام سے متاثر رہی۔ملک کے ہندوئوں کو انتہا پسندی،شدت پسندی اور ہندتوا کی طرف مائل کرنے کیلئے آر ایس ایس (قیام1925)نےمنظم طریقے سے ایک طویل جدوجہد کی ہے۔ذاکر حسین نے کہا کہ آر ایس ایس کا ایجنڈاوطن عزیز کو ہندو راشٹر بنانا ہے اور وہ اپنے اس مشن میں کامیابی کی دہلیز پر ہے۔
مسلمانوں کے زوال اور ہندتوا کے عروج کی سب سے بڑی وجہ انتشار و اتحاد ہے۔آر ایس ایس کی متعدد ذیلی تنظیمیں ہیں لیکن ہم نے کبھی بھی ان کے درمیان انتشار کے شعلے بلند ہوتے نہیں دیکھے اور مسلمان، ان کی ہر بات ہر موضوع کا آغاز ہی انتشار سے ہوتا ہے۔نہیں بی جے پی کو ہرانا ہے۔بی جے پی کو ہم 1980سے شکست دینے کی کوشش کر رہے ہیں اور اس کا نتیجہ ہم سب کے سامنے ہے۔بی جے پی کاخوف دلا کر کانگریس،ایس پی ،بی ایس پی وغیرہ مسلمانوں کے ووٹوں کی بدولت اقتدار تک پہنچیں اور ہر بار مسلمانوں کو فراموش کر دیا۔ہاشم پورا قتل عام،بٹلہ ہائوس انکائونٹر،دہشت گردی کے الزام میں مسلم نوجوانوں کی گرفتاری اور دفعہ 341 پر مذہبی پابندی اور لا تعداد فرقہ وارانہ فسادات کے علاوہ کانگریس نے مسلمانوں کو کیا دیا؟بی ایس پی نے گناہ طارق قاسمی اور خالد مجاہد کو گرفتار کروایا اور نمیش کمیشن کی رپورٹ اکھلیش یادو نے ٹھنڈے بستے میں ڈال دی۔بعد میں خالد مجاہد کواکھلیش حکومت میں پولس حراست میں موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ ذاکر حسین نےمزید کہاکہ رہائ منچ،راشٹریہ علماء کونسل،جمیتہ علماء ہند،جماعت اسلامی ہند اور اے پی سی آر کی لاکھ کوششوں کے بعد بھی طارق قاسمی کو رہائی نہیں مل سکی اور انہیں عمر قید کی سزا دے دی گئی۔
ذاکر حسین نے قوم کے لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہیکہ قوم کے سارے لوگ قوم کی بھلائی کیلئے اپنی توانائی خرچ کریں۔ہر وقت الزام تراشی،بہتان،انتشار اور آپس میں دست وگریباں ہونا ایک مہذب قوم کو زیبا نہیں دیتا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram