ملک بھر کے قبائلیوں کو راحت ، جنگل سے بے دخلی کے حکم پر سپریم کورٹ کی روک

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے ملک بھر کے قبائلیوں اور جنگل کے باشندوں کو جمعرات کے روز بڑی راحت دیتے ہوئے انہیں بے دخل کرنے کے اپنے سابقہ حکم پر فی الحال روک لگا دی۔جسٹس ارون کمار مشرا، جسٹس نوین سنہا اور جسٹس ایم آر شاہ کی بنچ نے ۱۳؍ فروری کے اپنے حکم پر روک لگائی ہے۔ اس سلسلے میں عدالت نے مرکزی اور ریاستی حکومتوں کو پھٹکار بھی لگائی۔ اس معاملے کی آئندہ سماعت ۱۰؍ جولائی کو ہوگی۔ عدالت عظمی نے اپنے حکم پر روک لگانے کا فیصلہ مرکزی حکومت کی جانب سے قبائلیوں کو جنگلوں سے ہٹانے کے حکم پر روک لگانے کے معاملے میں سماعت کے دوران دیا۔ دراصل مرکز اور گجرات حکومت کی جانب سے سالیسٹر جنرل تشار مہتہ نے بدھ کے روز اس معاملے کا خاص طور سے ذکر کیا تھا، جس پر عدالت نے متعلقہ درخواست کی سماعت کے لئے آج کی تاریخ مقرر کی تھی۔ واضح رہے کہ ۱۳؍ فروری کو جسٹس مشرا، جسٹس نوین سنہا اور جسٹس اندرا بنرجی کی بنچ نے ۱۶؍ ریاستوں کے تقریباً ۱۱ء۸؍ لاکھ قبائلیوں کے جنگل کی زمین پر قبضے کے دعووں کو مسترد کرتے ہوئے ریاستی حکومتوں کو حکم دیا تھا کہ وہ اپنے قوانین کے مطابق زمینیں خالی کرائیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest