اُردو پریس کلب انتر نیشنل کے جنر ل سیکرٹری طارق فیضی کے بھائی نیوزی لینڈ حادثہ میں زخمی

آگرہ:نماز جمعہ کے وقت نیوزی لینڈ کی دومساجد میں ہوئے حملہ میں کم سے کم ۴۹افراد کے ہلاک ہوگئے، اور ۲۰ سے ذائدہ زاخمی ہو گئے ، اس حادثہ کی تحقیقات میں احکام نے ایک شخص پر الزام لگایا ہے، اور تین دیگر کے حراست میں لے لیا ہے، میڈیا رپورٹ کے مطابق وزیر اعظم جسڈن ایرادن نے اس حادثہ پر کہاہے کہ تشدد کے ایک غیر معمولی واقعات کے طور پر تسلیم کر تے ہوئے اعتراف کیا اس میں متاثرلوگو یاتو تارکین وطن ہیں یا پناہ گزین ہیں، انہوں نے کہا کہ یہ واضع ہے کہ اب اس کو صرف ایک دہشت گردانہ حملے لے طور پر ختم کیاجا سکتا ہے، ہم جتنا جانتے ہیں، ایسالگتا ہے کہ یہ پہلے سے منصوبہ بندتھا،
ال نور مسجد کے اندر جب گولیوں کی بارش ہو رہی تھی، اس وقت اسی مسجد میں ٹرانسپورٹ کاروباری جمشیدپور ( بھارت ) رہائشی شمیم صدریقی نماز اداکر رہے تھے ، اُن کو بھی دو گولی لگی، تفصیلی معلومات فراہم کرتے ہوئے اُن کے چھوٹے بھائی اور اُردو پریس کلب انٹر نیشنل کے جنرل سیکرٹر ی طارق فیضی نے کہا کہ بھائی اپنے بیٹے شایان کے ساتھ نماز ادا کر رہے تھے، شایان نماز کے بعد گھر چلے گئے ،شمیم بھائی مسجد میں موجود رہے، اُسی وقت گولیوں کی آواز سے مسجد گونج اُٹھی، اس آواز کو سن کر شایان اپنے گھر ( جو مسجد کے قریب ہے) اپنی والدہ کے ساتھ مسجد کی جانب دوڈے ، حملے میں محمد شمیم صدیقی لو گولی لگی ہے، بھائی نے اپنے ہاتھ سے مسجد کی کانچ کی ونڈو کو توڈ دیا اور باہر کی طرف گر گئے ، جس کی وجہ اُن کی جان بچ گئی ، آپریشن ہونے کے بعد گولی نکال دی گئی ہے، شمیم صدیقی نیوزی لینڈ میں ٹرانسپورٹرہیں، ان کی اہلیہ ریحانہ پروین ، بیٹی علیشہ ( ۲۰ سال ) بیٹا شایان ( ۱۴ سال) اُن کے ساتھ رہتے ہیں، طارق نے کہا کہ میں اس حملے کی مذمت کرتا ہوں ، امن چین کی ذندگی گزارنے والے انسانوں پر کسی بھی قسم کے حملے کی میں مذمت کرتا ہون، میں مسجد میں ہلاک ہوئے تمام کی رُوح کی مغفرت اُور ذخمی لوگوں کی اچھی صحت کی دُعا کرتا ہوں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest