تاج محل مسجد میں نماز پابندی معاملہ میں ۱۲ نومبر کو آثار قدیمہ کے آفسرسے ہو گی ملاقات، سید ابراہم حسین ذیدی

آ گرہ: گزشتہ روز تاج محل احاطے میں موجود مسجد میں نماز کی پابندی پر آثار قدیمہ کے ذبانی پابندی اُور امام کو مسجد میں نماز ادا نہ کرنے کے حکم کے بعد تاج محل مسجد انتظامیہ کمیٹی نے شہر کے تمام مسلمان کی اجلا س کا انعقاد تانگہ اسٹینڈ پر کیا۔ جس میں شہر کی تمام شخصیت نے شرکت کر اس بات کا احساس دلایا کہ تاج محل مسجد معاملہ میں ہم تمام لوگ متحد ہیں۔ اس میں طے ہوا کہ کمیٹی کی جانب سے ۱۲ نومبر کو محکمہ آثار قدیمہ آفسر سے ملاقات کر میمورنڈم دیا جائے گا،واضح ہوکہ محکمہ آثار قدیمہ نے سال ۲۰۰۶میں سپریم کورٹ کے حکم نامہ کو بنیاد بنا کر صرف جمعہ کے روز نماز ادا کر نے کی اجازت کا فیصلہ لیا ہے۔ اسی ماہ ۳ نومبر کو آثار قدیمہ آفسر ڈاکٹر بسنت کمار کے حکم سے تاج محل میں ہر روز ادا ہونے والی نماز پر پابندی لگا دی گئی ہے۔اس کے ساتھ واذوکے ٹینک پر ریلنگ لگا کر تا لا لگا دیا ہے۔ محکمہ کے مطابق تاج محل مسجد میں جمعہ کی نماز ہی ادا کی جائے گی، وازو کے ٹینک پر تالا کی وجہ سیاح کی حفاظت کو پتایا گیا ہے۔ آفسر ان کا کہنا ہے کہ پانی کی وجہ سے سیاح زخمی ہو سکتے ہیںاجلاس کو خطاب کرتے ہوئے سید ابراہم حسین ذیدی نے کہاکہ تاج محل میں مسجد تعمیر کے وقت مسلسل نماز ادا ہورہی ہے۔ مسجد میں مقامی ، ملکی ( سیاح )، غیر ملکی( سیاح ) نمازی نماز ادا کرتے ہیں ۔ جب کمیٹی نے نماز کی پابندی پر آفسر سپریم کورٹ کا حکم نامہ کا مطالبہ کیا توکسی قسم کوکوئی معقول جباب حاصل نہیں ہوا ، مفتی مدثر خان قادری نے کہا کہ ملک کے آئین نے ہر ہندوستانی کو اُس کے مذہب کے مطابق عبادت گاہ میں عبادت کرنے کی اجازت دی ہے۔اگر سپریم کورٹ نے تاج محل احاطے کی مسجد میں نماز پر پابندی لگائی ہے تو اس فیصلہ کی کاپی محکمہ عام کرے ، ہم ملک کے قوانین کا احترام کرتے ہیں۔اگر عدالت کا فیصلہ نماز پر پابندی کا ہے تو ہم عدالت میں نماز کے لئے درخواست کریں گے ۔اگر یہ فیصلہ محکمہ کا ہے تو مسجد میں نماز کے لئے ہم ہر وہ امن کی کوشش کریں گے ۔ جس سے مسجد میں نماز قائم ہو،ادریس علی نے کہا کہ محکمہ مسجد معاملہ میں تاج نگری کی فضا کو خراب کر نے کی کوشش کر رہا ہے ۔ محکمہ مسجدمعاملہ پر جلد فیصلہ کر ے جس سے اس پر کسی قسم کی سیاست نہ ہو
سلمان مظہر نے کہا کہ تاج محل مسجد میں نماز پر پابندی پرداشت نہیں کی جائے گی۔ حاجی جمیل الدین قریشی نے کہا کہ تاج محل میں نماز پابندی کسی قسم کی سیاست تو نہیں،اس اجلا س میں سمی آغائی ، احمد حسن، منور علی، رندیم نور، اسلم قریشی ، عرفان سلیم، عدنان ، دیگر موجود رہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram