نظم :فہیم اختر(لندن)

روز جیتا ہوں  روز مرتا ہوں پھر بھی زندہ رہتا ہوں کیوں رہتا ہوں کس کے لئے رہتا ہوں اپنوں کے لئے رہتا ہوں  یا غیروں کے لئے رہتا ہوں ناز نخرے سہتا ہوں آ ہوں سے سہمتا ہوں  پھر بھی کسی چاہ میں جینے کی حسرت میں ہر بار بھول جاتا ہوں جس کے سہارے زندہ ہوں ہم سب ہیں نادان حقیقت سے انجان گر رک جائے میری سانس تو قصہ ہوجائے تمام شاید زندگی ایک دھوکہ ہے جسے جان کر بھی ہم ہیں انجان اسی لئے روز جیتا ہوں

Read more

Pin It on Pinterest