ایودھیا تنازعے :سپریم کوٹ کافیصلہ

نئی دہلی:چیف جسٹس رنجن گگوئی کی سربراہی میں پانچ رکنی آئینی بینچ نے اپنے حکم میں کہا، ’’ہمیں اس معاملے کو حل کرنے کے لئے ثالثی کی راہ اختیار کرنے میں کوئی قانونی رکاوٹ نظر نہیں آتی ہے‘‘۔
آئینی بینچ نے سپریم کورٹ کے سابق جج ایف ایم کلی فل کی قیادت میں تین رکنی ثالثی کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔ سپریم کورٹ نے ایوھیا کے رام جنم بھومی بابری مسجد کے زمینی تنازع کو ثالثی کے ذریعہ حل کرنے کا حکم دیا اوراس کے لئے ایک کمیٹی قائم کی۔کمیٹی میں سماجی کارکن اور آرٹ آف لونگ کے بانی شری شری روی شنکر اور سینئر وکیل رام پنچو شامل ہیں۔ ثالثی کا کام فیض آباد میں ہوگا، جس کی رپورٹنگ میڈیا نہیں کرسکے گا۔ آئینی بنچ میں جسٹس گگوئی کے علاوہ، ایس اے بوبڈے، جسٹس اشوک بھوشن، جسٹس ڈی چندرچوڑ اور جسٹس ایس عبدالنظیر شامل ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest