ڈاکٹروں نے کی ہڑتال ختم، اب مریضوں کو ملی راحت

دہلی کے مولانا آزاد اور لوک نائک جے پرکاش نارائن اسپتال کے ڈاکٹروں نے اپنی ہڑتال ختم کر دی ہے۔واضح رہے کہ دہلی کے لوک نائک جے پرکاش نارائن اسپتال میں ایک بار پھر ہنگامہ ہو گیا تھا۔ ایک مریض کے اہل خانہ نے اتوار کی رات کو اسپتال کی ایمرجنسی میں ایک ڈاکٹر سے مارپیٹ کر دی۔ اس سے ناراض ریزیڈنٹ ڈاکٹر غیرمعینہ ہڑتال پر چلے گئے تھے۔وہیں، ناراض ڈاکٹروں کے ہڑتال میں پر جانے سے اسپتال میں اوپی ڈی کے علاوہ ایمرجنسی سروس بھی ٹھپ ہو گئی، اگرچہ اب ہڑتال ختم ہونے سے مریضوں کو راحت ملے گی۔ وہیں، حمایت میں دہلی کے دیگر بڑے اسپتال مولا آزاد میڈیکل كالج کے ڈاکٹرس بھی ہڑتال پر چلے گئے تھے۔ انہوں نے بھی اب ہڑتال ختم کر دی ہے۔ اس اسپتال میں بھی اتوار کی رات کو مریض کے رشتہ داروں نے ڈاکٹروں کے ساتھ بدتمیزی کی تھی۔ اس کی مخالفت میں ڈاکٹر ہڑتال پر چلے گئے تھے، اگرچہ ڈاکٹروں نے سیکورٹی کا مطالبہ کیا ہے۔ ڈاکٹروں کے ہڑتال کی وجہ سے مریضوں کو بہت پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ۔ ایل این جے پي اسپتال میں اس سے پہلے بھی ڈاکٹروں کے ساتھ مارپیٹ ہوئی تھی، جس کے بعد وہاں مارشل رکھے گئے تھے لیکن جلد ہی ان کو ختم کیا گیا تھا۔ خبروں کے مطابق کسی بات کو لے کر ایک مریض کے تيماردار اور ڈاکٹر میں کہا سنی ہو گئی۔ مریض کے اہل خانہ نے ہنگامہ کر دیا اور دیکھتے ہی دیکھتے وہاں موجود میڈیسن سیکشن کے ڈاکٹر سعود ملک پر حملہ کردیا۔ اس حملے میں ڈاکٹر کو چوٹیں آئی ہیں۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی اسپتال کے ڈاکٹروں نے پیر سے ہڑتال پر جانے کا اعلان کر دیا۔ اب لوک نائک اسپتال سمیت ان پانچوں اسپتالوں کے ڈاکٹر غیر معینہ ہڑتال پر بیٹھ گئے ہیں۔ عدم سیکورٹی میں تشدد کا شکار ہو رہے ڈاکٹروں کی حفاظت کا مطالبہ کرتے ہوئے اوپی ڈی اور ایمرجنسی خدمات بھی ٹھپ کر دی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ ایمس نے بھی ڈاکٹروں کی اس ہڑتال کو اپنی حمایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایمس ایسے مطالبات میں اپنے ساتھیوں کے ساتھ کھڑا ہے۔ اس کے علاوہ ایمس نے دہلی حکومت، وزیر صحت اور وزیر اعلیٰ سے معاملے میں مداخلت کرنے کی اپیل کی ہے۔ہڑتال پر بیٹھے ڈاکٹروں کے مطابق وہ لوگ جلد ہی مینجمنٹ سے ملاقات کریں گے اور ڈاکٹروں کو کام کی جگہ پر سیکورٹی دینے کو لے کر بات چیت کریں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest