شمس رمزی کی پہلی برسی کے موقع پر

اس میں کوئی شک نہیں کہ موت برحق ہے – لیکن کچھ اموات ایسی ہوتی ہیں جو اپنے چاہنے والوں، رشتہ داروں اور دوستوں کو رنجیدہ کر دیتی ہیں – ایسی اموات میں ایک موت میرے عزیز ترین دوست جمیل احمد شمس رمزی کی ہے سچ مانیں کہ یہ میرا ذاتی نقصان ہے جس کی تلافی نا ممکن ہے ۔
مرحوم ہمہ صلاحیتوں کے مالک تھے – اچھّے انسان بے مثال شاعر، دوستوں کے دوست اور دشمنوں کے ہمدرد شمس رمزی اپنے تخلص کی معنویت کے عین مطابق تھے – ان کے خیالات کی روشنی اردگرد کے علاوہ دور دور تک پھیلی ہوئی تھی – ادب کے میدان کے اندھیروں کو دور کر رہی تھی – ان کے کچھ شاگردوں کے دلوں میں اس روشنی کے کچھ حصے ضرور محفوظ ہوں گے لیکن شمس نے طلوع ہو کر آسمانِ ادب کو جو رونق بخشی تھی اس کو غروب ہوئے آج پورا ایک سال گذر چکا ہے – یہ وہ شمس ہے جو دوبارہ طلوع نہ ہوگا! اللہ پاک میرے دوست کو جنت الفردوس میں جگہ دے آمین – احباب سے گزارش ہے کہ شمس رمزی کے حق میں دعائے مغفرت کریں ۔
غمگسار اسلم چشتی ( پونے) انڈیا
چیئرمین ‘صدا ٹوڈے، اُردو نیوز ویب پورٹل
Sadatodaynewsportal@gmail.com
www.sadatoday.com
09422006327

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest