پرانی دلی میں امن وامان۔گنگا جمنی تہذیب کی جیت

دہلی کے لال کنواں میں گزشتہ دنوں دو فرقوں کے درمیان ہوئی جھڑپ اور مذہبی مقام میں توڑ پھوڑ کے بعد وشو ہندو پریشد نے منگل کو سخت سیکورٹی کے درمیان شوبھا یاترا نکالی۔ وہیں یاترا کو لے کر انتظامیہ کی جانب سے سخت سیکورٹی کا انتظام کیا گیا تھا۔ سینٹرل دہلی کے ڈپٹی کمشنر ایم ایس رندھاوا نے بتایا کہ سیکورٹی کے پیش نظر سے شوبھا یاترا میں پختہ انتظامات کئے گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ گھر کی چھتوں پر بھی سیکورٹی فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔ پورے علاقے میں سی سی ٹی وی کیمرے لگوائے گئے ہیں، ساتھ ہی فساد مخالف ٹیمیں بھی تعینات ہیں۔ ان سب کے علاوہ ماحول نہ بگڑے اس کے لئے ڈرون کیمرے سے بھی پورے پروگرام کی نگرانی کی گئی۔ غور طلب ہے کہ لال کنواں میں گزشتہ دنوں معمولی پارکنگ تنازع کے بعد فساد ہو گیا تھا۔ پولیس کو انٹیلی جنس اطلاع ملی تھی ہے کہ کچھ شرارتی عناصر ماحول بگاڑنے کی کوشش کر سکتے ہیں۔ پولیس حکام کا کہنا ہے کہ آج کے پروگرام کو دیکھتے ہوئے پولیس نے پیر کی رات سے ہی علاقے میں سیکورٹی کو پختہ کر لئے تھے۔ ڈرون کیمروں سے نگرانی کی جا رہی ہے۔ ساتھ ہی پورے پروگرام کے دوران تقریباً چار کلومیٹر کے دائرے میں ڈرون کیمرے سے نگرانی کی جا رہی ہے۔ پولیس نے دو سو روف ٹاپ بنائے ہیں، جس پر پولیس اہلکار تعینات ہیں۔ اس دوران معاشرے کے تمام طبقوں کے لوگوں نے تعاون دیا۔ مورتی نصب کرنے سے پہلے شوبھا یاترا نکالی گئی۔ اس دوران ہزاروں کی تعداد میں لوگ موجود رہے۔ اس دوران موقع پر پہنچے شردھالوؤں نے جے شری رام اور وندے ماترم کے نعرے بھی لگائے۔ مورتی نصب کرنے کے دوران کوئی انہونی نہ ہو اس کے لئے سیکورٹی انتظامات میں 2000 سے زیادہ دہلی پولیس اور پیرا ملٹری کے جوانوں کو لگایا گیا تھا۔ معلومات کے مطابق، سابق مرکزی وزیر اور سینئر بی جے پی لیڈر وجے گوئل بھی موقع پر موجود رتھے۔ حوض قاضی کے پورے علاقے میں زیادہ سے زیادہ پی سی آر کے اہلکاروں کی بھی تعیناتی کی گئی تھی۔ علاقے میں امن و امان برقرار رکھنے کے لئے دہلی پولیس کی علاقے کے سماجی لوگوں کے ساتھ میٹنگیں ہوئی تھیں۔ درگا مندر میں توڑ پھوڑ کئے جانے کو لے کر مشرق ضلع پولیس نے کیس درج کیا ہے۔ اس کے تحت اب تک 17 ملزمین پکڑے جاچکے ہیں۔ ان میں 7 بالغ اور 10 نابالغ شامل ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram