نڈر علی گڑھ ۔نذر سر سید۔

سرسید کے یوم پیدائش پر خصوصی پیشکش

ا ے علی گڑھ میرا رشتہ ہے پرانا تجھ سے
یہ فقط چند دنوں ہی کی رفاقت تو نہیں
تیرے دامن میں گذارے ہوئے کچھ ماہ سال
کچھ لڑکپن کے حدیں خواب گذشتہ احباب
یہ تو سب یاد کی پروائ ہے آتی ہے چلی جاتی ہے

آے علی گڑھ میرا رشتہ ہے پرانا تجھ سے
نسل در نسل سے پائ ہوئ میراث ہے تو
آیک دیوانے نے رکھا تھا جو آندھی میں چراغ
آس کی لو سے مرا دل آج بھی تابندہ ہے
اس کی ضو سے کئ نسلوں کے مقدر چمکے

سرخ پتھر کی عمارات میں زندہ ہیں وہ سب خواب
جو دیکھے تھے گئے وقتوں نے
خواب تھے قوم کی بیداری کے
اک نئے دور کی تیاری کے

اج بھی تیرے درو بام گواہی دیں گے
کتنے طوفانوں کی رو دیکھی ہے

آج اس دور پر آشوب میں بس یہ ہے دعا
یہ جو سید کا چمن ہے سدا اباد رہے

عذرانقوی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram