اسلام وہ پودا ہے کہ اسے دباؤ گے تو ابھرے گا، کاٹو گے تو ہرا ہوگا :مولانا محمد رحمانی مدنی

نیوزی لینڈ یا دنیا کے مختلف خطوں میں ساڑھے چودہ سو سال سے اسلام پر مسلسل حملے کبھی بھی اسلام کو کمزور نہ کرسکے

نئی دہلی(پریس ریلیز) رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد مبارک سے اسلام اور مسلمانوں کے خلاف بڑی سے بڑی سازشیںجاری ہیں ،خود رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو لہو لہان کیا گیا، آپ کے قتل کی سازشیں ہوئیں، آپ پر جادو کیا گیا ، آپ کو زہر دیا گیا ، آپ کے ساتھیوں کو دھکتے انگاروں پر لٹایا گیااور سخت سے سخت آزمائشوں سے گذرنے پر مجبور کیا گیا لیکن اسلام اور اہل اسلام کے خلاف جتنی بھی سازشیں ہوئیں ہمیشہ اسلام اس کے بعد اور ابھر کر سامنے آیا اور اس میں مزید نکھار پیدا ہوا ، نیوزی لینڈ کا حادثہ یقیناً درد ناک ہے لیکن مسلمانوں کے لئے یہ کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ وہ فلسطین میں اس سے زیادہ نازک حالات سے گذررہے ہیں، وہاں اسکولوں پر یہودی بمباری کرکے معصوم بچوں کو ہلاک کر ڈالتے ہیں، سیریا میں بھی یہی مسلمان تباہ ہو رہا ہے لیکن یہ ساری کی ساری سازشیں اسلام کو مزید مضبوط کرتی ہیں۔ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اپنے احوال کو جہاں بھی نازک پائیں وہاں اس بات کا جائزہ ضرور لیں کہ دینی لحاظ سے ہمارے اندر کون کون سی کمیاں اور کوتاہیاں ہیںاور ہم کہاں کہاں شرک وبدعات میں مبتلا ہو چکے ہیں ۔اگر ہمیں امن وسلامتی چاہیے ہیںتو سب سے پہلے ہمیں اپنی حالت کو بدلنا ہوگا اور بالخصوص شرک وبدعات کو چھوڑ کر توحید واتباع کی طرف رجوع کرنا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار ابوالکلام آزاد اسلامک اویکننگ سنٹر ، نئی دہلی کے صدر جناب مولانا محمد رحمانی سنابلی مدنی حفظہ اللہ نے سنٹر کی جامع مسجد ابوبکر صدیق،جوگابائی میں خطبۂ جمعہ کے دوران کیا ۔مولانا اسلام اور مسلمانوں پر ہونے والے نت نئے حملوں اور میڈیا کی جانب سے اس پر خاموشی کی تشویش ناکی پر گفتگو کررہے تھے۔
خطیب محترم نے مزید فرمایا کہ ہمیںروئے زمین پر عزت ووقار اور غلبہ اسی وقت حاصل ہوسکتا ہے جب ہم سورۂ نور کی آیت نمبر ۵۵پر غور کرکے اس کے مطابق اپنے آپ کو خالص موحد مسلمان بنائیں اور توحید کے ساتھ اتباع رسول کا بھی مکمل خیال رکھیں کیوں کہ یہی دنیا میں کامیابی کا نسخہ ہے ۔ مولانا نے مزید فرمایا کہ ظلم کرنے والے نہ کبھی کامیاب ہوئے ہیں اور نہ ہوں گے، قرآن مجید ان کے بارے میں سخت سزا سناتا ہے کہ ایسے لوگوں کو قتل کردیا جانا چاہئے یا سولی پر لٹکا دیا جانا چاہئے یا مخالف جہات سے ان کے ہاتھ پیر کاٹ دینے چاہئیں یا انہیں جلا وطن کردینا چاہئے، ان ظالموں کے لئے دردناک عذاب ہے اور انہیں چاروں طرف سے آگ نے گھیر لیا ہے، جب یہ پانی مانگیں گے تو انہیں تیل کی تلچھٹ پیش کی جائے گی جس سے یہ جل بھن کر رہ جائیں گے۔
مولانا نے مزید فرمایا کہ مسلمانوں نے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد مبارک ہی سے آزمائشوں کو جھیلا ہے، خود رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم آزمائش سے گزرے ہیں۔ملک وبیرون ملک عراق، سیریا اور دنیا کے مختلف خطوں میں اسلام کے خلاف ہمیشہ ظلم وستم کا بازار گرم رکھا جاتا ہے لیکن اسلام امن وامان اور سلامتی کا مذہب ہے وہ ہمیشہ آگے بڑھتا ہی رہا ہے اور بڑھتا ہی رہے گا ۔ان شاء اللہ۔بس ہماری ذمہ داری یہ ہے کہ ہم اپنے اعمال پر نظر ثانی کریں اور سچے پکے مسلمان بن کر قرآن وسنت کی تعلیمات کو مضبوطی کے ساتھ تھام لیں۔آج دشمنان اسلام چاہتے ہیں کہ اسلام کو صفحہ ہستی سے نیست ونابود کردیں جب کہ اللہ رب العالمین نے اسے مکمل کرنے اور غالب رکھنے کی ٹھان لی ہے چاہے کافروں کو برا ہی کیوں نہ لگے۔اس وجہ سے ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم ان پر غور کرکے اپنے اندر اسلامی تعلیمات پر عمل پیرا ہونے کی تڑپ پیدا کریں اور سچے مسلمان بنیں اور رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت اور امت کے لئے آپ کی قربانیوں کو یاد رکھیں اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اسوۂ مبارکہ کو اپنالیں۔اخیر میں مسلمانوں سے صبر وتحمل اپنانے اوردعائیہ کلمات پر خطبہ ختم ہوا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *