موب لنچنگ نے پھر لی ا یک کی جان۔جانئے پورا واقعہ

جھارکھنڈ کے ضلع دولت آباد میں بدھ کے روز ایک ٹرک کی بیٹری چوری کرنے کے الزام میں ایک ہجوم نے دو لوگوں کی پٹائی کردی جسمیں ایک شخص مبارک انصاری کی موت ہوگئی اور دوسرے کو بڑی مشکل سے بچایا گیا۔کہانی کچھ یوں ہے کہ پریم چند مہتواوران کے بیٹے گووند پورایسٹ پنچایت کے تحت سی سی ایل گووند پوراسپتال کےسامنے گاڑیوں کو دھونے کے لئے سروسنگ سینٹر چلاتے ہیں۔ ایک ہفتہ قبل ہی سروسنگ سینٹر میں چوری ہوئی تھی اورپانی کے پمپ سمیت دوسرے پائپ وغیرہ کی چوری ہوئی تھی۔ منگل کی رات تقریباً دو بجے پریم چند مہتو کی بیوی نینا دیوی ضرورت کے لئے سروس سینٹر میں اپنے گھرسے باہر نکلی تو دیکھا کہ دوافراد گاڑی کی بیٹری چوری کرکے لے جارہے ہیں۔ نینا دیوی نے شورمچایا تو گھرکے سبھی لوگ دوڑ پڑے اوردونوں چوروں کو پکڑ لیا اور سروسنگ سینٹر کے باہر پڑے ہوئے ایک بجلی کے پولس سے انہیں باندھ دیا، اس کےبعد ان لوگوں نے واقعہ کی اطلاع گووند پور بستی میں رہنے والے لوگوں کودی۔ اطلاع ملتے ہی بستی سے رات میں کافی تعداد میں لوگ سروس سینٹرمیں جمع ہوگئے۔ بھیڑ کے دوران پوچھے جانے پر 48 سالہ شخص نے اپنا نام مبارک انصاری ولد مرحوم محمد حسینی اور دوسرے نے اخترانصاری ولد قربان انصاری عمر 26 سال اورنئی بستی کا رہنے والا بتایا۔ ہجوم نے دونوں کی جم کر پٹائی کی، پھرصبح تقریباً پانچ بجے کسی نے اس واقعہ کو دیکھ کرپولیس کو اطلاع دی۔ اس کے بعد موقع پرپولیس پہنچی اور دونوں کو علاج کے لئے اسپتال لے کرپہنچی۔ حالانکہ راستے میں ہی مبارک انصاری کی موت ہوگئی جبکہ اخترانصاری زیرعلاج ہے۔پولیس نے اس کیس کے سلسلے میں پانچ افراد کو حراست میں لے کر ان کے خلاف قتل ، قتل کی کوشش ، اور تعزیرات ہند کی دفعات کے تحت سازش کے الزامات کے تحت پہلی معلومات درج کرنے کے بعد گرفتار کیا۔ بعدازاں انہیں مقامی عدالت میں پیش کیا گیا اور 14 دن کی عدالتی تحویل میں بھیج دیا گیابی جے پی حکومت کے بعد سے ہندوستان میں متعدد موب لنچنگ کے واقعات ہوئے ہیں اور جب بھڑ کو یہ پتہ چلتا ہے کہ یہ شخص مسلمان ہے تو پھر سمجھ لیجئے اب اس کا ذندہ بچنا مشکل ہے ۔ مہاراشٹر ، تریپورہ ، آسام ، گجرات ، آندھرا پردیش ، تمل ناڈو  تلنگانہ ، چھتیس گڑھ ، مغربی بنگال اور کرناٹک میں بھی متعدد ایسے ہی واقعات ہوچکے ہیں ۔ جولائی ۔میں 49مور شخصیات نے موب لنچنگ کے خلاف وزیر اعظم نریندر مودی کو خط بھی لکھاتھالیکن ہوا کچھ نہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram