مدھیہ پردیش کےشیوپوری میں ٹریکٹر کی ٹکر سے گائے کی موت پر عجب فرمان

گائوں کی پنچایت نے ڈرائیور کو اہل خانہ سمیت گائوں چھوڑنے کا فرمان جاری کیا

بھوپال:مدھیہ پردیش کے شیوپوری میں ٹریکٹر کی زد میں آنے سے گائے کی موت ہوگئی ۔ اس کے بعد گائوں کی پنچایت نے ٹریکٹر ڈرائیور کے اہل خانہ کو گاوں سے ہی نکالنے کا فرمان سنایا دیا ۔ یہ واقعہ آدیواسی وکاس کھنڈ کراہل کے برگواں قصبہ میں پیش آیا ، جہاں گائے کی موت کے بعد پولیس میں رپورٹ درج کرانے کی بجائے پنچایت نے ٹریکٹر ڈرائیور کو اہل خانہ سمیت گاوں چھوڑنے کا حکم دیا ہے۔ٹریکٹر ڈرائیور برگواں کے رہنےو الے پپو پرجاپتی کے اہل خانہ نے بتایا کہ پپو گزشتہ منگل کی صبح آٹھ بجے کمہار محلہ میں ٹریکٹر ٹرالی پیچھے کررہا تھا ، اسی دوران سڑک کنارے بیٹھی گائے ٹریکٹر کی زد میں آگئی اور اس کی موت ہوگئی ۔ اس واقعہ کے بعد پپو نے سب سے پہلے اپنے سماج کے لوگوں کو بلایا اور معاملہ کی جانکاری دی ۔ سماج کے لوگوں نے اس کو گئو کشی قرار دیا اور معاملہ کا فیصلہ پنچایت کے ذریعہ کروانے کا فیصلہ کیا ۔اس کے بعد مندر میں پنچ اور مقامی لوگ جمع ہوئے ۔ پنچم سنگھ چوہان کی قیادت میں جمع ہوئے پنچ اوم پرکاش گوتم ، جے پرکاش شرما ، شنکر میہتے ، مراری پرجاپتی اور رگھویر پرجاپتی نے اس کو گئو کشی قرار دیا اور کہا کہ یہ گناہ ہے اور اس کی تلافی کرنی ہوگی ۔ اس کے بعد پنچوں نے پپو اور اس کے اہل خانہ کو گاوں سے باہر کرنے کا فیصلہ سنادیا ۔معاملہ یہیں ختم نہیں ہوا ، پنچایت کے فیصلہ کے بعد پپو کے اہل خانہ نے پنچایت سے معافی مانگی اور سزا میں چھوٹ کا مطالبہ کیا ۔ اس کے بعد پنچایت نے نرم رویہ دکھاتے ہوئے فوری طور پر گنگا میں اشنان کرنے اور لوٹنے کے بعد لوگوں کی دعوت کرنے کا حکم دیا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest