جموں و کشمیر فوج کو ملی بڑی کامیابی

پلوامہ حملہ کی سازش رچنے والا دہشت گرد ہلاک

۱۴؍ فروری کو جموں و کشمیر کے پلوامہ میں ہوئے دہشت گردانہ حملے کے ماسٹر مائنڈ کے ایک تصادم میں مارے جانے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔ جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع کے ترال میں پیر کو ہوئے ایک انکاؤنٹر میں تین دہشت گرد مار ے گئے۔ مانا جا رہا ہے کہ ہلاک دہشت گردوں میں مدثر احمد خان عرف محمد بھائی بھی شامل ہے۔تفصیلات کے مطابق جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ کے ترال میں ہوئے تصادم میں سلامتی دستوں نے جیش کے تین دہشت گردوں کو مار گرایا ہے۔ مدثر وہی دہشت گرد ہے جس نے 14 فروری کو سی آر پی ایف کے قافلے پر ہوئے حملے کے لئے آئی ڈی پلانٹ کیا تھا۔ بتایا جا رہا ہے کہ مدثر پلوامہ حملہ کی سازش رچنے والے دہشت گردوں میں سے ایک تھا۔جانچ ایجنسیوں کی مانیں تو مدثر نے دہشت گرد کامران کے ساتھ مل کر پلوامہ حملہ کے لئے ایک آئی ڈی کٹ بنائی تھی۔ یہ کٹ خاص طرح سے گاڑی کے ذریعہ خودکش حملہ کرنے کے لئے بنائی گئی تھی۔ سلامتی دستوں نے کامران کو پلوامہ حملے کے فورا بعد ہی مار گرایا تھا۔ 24 سال کا مدثر ایک سال پہلے ہی جیش میں شامل ہوا تھا۔ اس سے پہلے وہ جیش کا اوور گراونڈ کارکن تھا۔اس کے علاوہ، سلامتی دستوں نے کل سے جاری تصادم میں جیش کے ایک دیگر دہشت گرد سجاد کو مار گرایا ہے۔ الزام ہے کہ سی آر پی ایف کے قافلہ پر ہوئے حملہ کے لئے سجاد نے گاڑی خریدنے میں مدد کی تھی اور پھر وہ گاڑی کو حملہ کی جگہ لے کر آیا تھا۔ اس کے علاوہ اس تصادم میں ایک پاکستانی دہشت گرد کو بھی مار گرایا گیا ہے۔ جموں وکشمیر میں دہشت گردانہ ماڈیول کے خلاف یہ اب تک کا سب سے بڑا اور کامیاب آپریشن ہے۔بتا دیں کہ علاقہ میں دہشت گردوں کے چھپے ہونے کی خفیہ اطلاع کے بعد سلامتی دستوں نے اتوار کی دیر شام سرچ آپریشن شروع کیا تھا۔ مارے گئے دہشت گردوں کے پاس سے بھاری مقدار میں گولہ بارود برآمد ہوئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest