ہنرہاٹ کے ذریعہ پانچ لاکھ روزگار پیدا کرنا مقصد :مختار عباس نقوی

اس میں ہندوستان کی جھلک نظرآتی ہے ،دستکاری کو اس سے بہتر انداز میں پیش نہیں کیاجاسکتا ہے:وزیراعلی فڑنویس

آج یہاں عروس البلادممبئی کے شمال مغربی ممبئی میں واقع باندرہ کرلاکمپلکس کے وسیع ایم ایم آرڈی اے گروانڈ میں10روزہ’’ ہنرہاٹ ‘‘کا مہاراشٹر کے وزیراعلیٰ دیویندرفڑنویس اور مرکزی وزیر برائے اقلیتی امورسیّد مختارعباس نقوی نے روایتی ڈھول تاشے اور لیزم کی گونج میں کیا ،اس موقع پر دیویندرفڑنویس نے کہا کہ ممبئی میں ہنرہاٹ کا ایک اہم مقصد ہے اور یہاں پہنچ کر ہمیں ایک چھوٹے موٹے ہندوستان کی جھلک نظرآتی ہے ،ملک کی دستکاری ،دستکاروں، گھریلو صنعتوںاور فن کاروں کی ترقی اور بہتر ی وفروغ کے لیے اس سے بہترموقع اور کوئی نہیں ہوسکتا ہے ۔
وزیراعلیٰ فڑنویس نے مرکزی وزیر نقوی کے ہمراہ ایم ایم آرڈی اے کے وسیع میدان میں منعقد ’’ہنرہاٹ‘‘کے مختلف اسٹالوں کا جائزہ لیا اور دستکاروںاور گھریلوصنعت سے وابستہ فن کاروں سے تبادلہ خیال کیا اور اس بات پر مسرت کا اظہار کیا کہ ہنرہاٹ ہزاروں فن کاروںاور دستکاروں کی روزی روٹی کا ذریعہ بنتا جارہا ہے۔
اس سے قبل صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے مرکزی وزیربرائے اقلیتی مختارعباس نقوی نے دعویٰ کیا کہ مرکزکی مودی حکومت نے مذہب ،ذات پات اور علاقائیت کے اسپیڈ بریکرکو ختم کرنے کی کوشش کرتے ہوئے ترقی کی شاہراہ کی تعمیر کردی ہے اور ’’ہنرہاٹ‘‘اسی شاہراہ کا ایک حصہ ہے۔جہاں ملک بھر کے دستکاروںاور فن کاروں کی گاڑی تیز رفتاری سے دوڑرہی ہے اوران کے ہنراور فن کو فروغ حاصل ہورہا ہے، ان فن کاروں کی اکثریت کا تعلق اقلیتی فرقے سے ہے
مہاراشٹر کے وزیراعلیٰ دیویندرفڑنویس نے اس ’ہنرہاٹ ‘کا افتتاح کیا جوکہ 31دسمبرتک یہاں جاری رہیگی اورافتتاحی تقریب میں وزیرمملکت ڈاکٹر وریندرکمار ،حج کمیٹی سی ای او ڈاکٹر مقصود اے خان ،کمیٹی کی ممبر ڈاکٹر فیروزہ بانوڈقبمی اقلیتی ترقیاتی اور مالیاتی کارپوریشن کے چیئرمین اور منیجنگ ڈائرکٹر شہباز علی ،بی جے پی ممبئی کے صدراور ایم ایل اے اشیش شیلار،اردوجرنلسٹ ایسوسی ایشن کے سکریٹری سرفرازآرزو ،اور نائب صدرجاوید جمال الدین،اجمیر درگاہ کمیٹی کے رکن محمد فاروق اعظم ،مہاراشٹر مولانا آزادمالیاتی کارپوریشن کے چیئرمین حیدراعظم اور دیگر معززین نے شرکت کی ۔مختار نقوی نے اس موقع پر مزید کہا کہ اقلیتی امورکی وزارت کے ذریعہ منعقد کیے جانے والے ہنرہاٹ کوملک میں کافی پسند کیا جارہا ہے کیونکہ دستکاروںاور فن کاروں کو ملک بھر کے بازاروںمیں خرید وفروخت کا موقع مل رہا ہے ،ہنرہاٹ وزیراعظم نریندرمودی کے ’میک ان انڈیا‘،اسٹینڈ اپ انڈیا‘اور ’اسٹارٹ اپ انڈیا ‘کا ایک بھروسہ مند برانڈ بن چکا ہے۔
انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک سال کے دوران ہنرہاٹ کی وجہ سے ڈیڑھ لاکھ سے زائد فن کاروں،دستکاروںاور کاریگروں کو روزگار اور روزگارکے مواقع مہیا ہوئے ہیں اور امید ہے کہ 2019تک پانچ لاکھ دستکار کو روزگار مہیاکرانے میں کامیابی حاصل ہوگی ،ہنرہاٹ کے دوران ملک بھر کے لذیذ کھانوں اور پکوانوں کے لیے شہرت حاصل کررہا ہے جبکہ اس موقع پر ثقافتی پروگراموں کا اہتمام بھی کیا جارہا ہے ،قوالی ،صوفی موسیقی اور لوک رقص وغیرہ کا بھی اہتمام کیا جارہا ہے۔
وزیرموصوف نے مزید کہا کہ ہنرہاٹ میں جھاڑکھنڈاور بھاگل پوری سلک،آسام کی بینت لکھنؤی چیکن کاری ،اترپردیش کے تامبے اور پیتل کے برتن ،کانچ کی اشیاء آندھراپردیش کی قلم کاری اور منگل گیری ،موتیوں کے زیورات کے ساتھ ساتھ کھانے اور پکوانوں میں لکھنوٌ کے اودھی پکوان ،راجستھان کا دال باٹی چورمہ ،گجراتی تھالی مہاراشٹر کے تیزپکوان ،کیرل کے فوڈ ،مدھیہ پردیش کا سابودانہ کھچڑی ،پوہا ،جلیبی ،بھٹے کی سیخچٹپٹی چاٹ،بنگالی مٹھایاں اور جنوبی ہند کے تیز مرچی کے پکوان شامل ہیں۔امسال ستمبر میں ہنرہاٹ الہ آبادمنعقد ہوا جبکہ نئی دہلی میں گزشتہ تین سال سے سلسلہ جاری ہی ممبئی کے اسلام جمخانہ میں 2017میں اس کا شاندار انعقادکیا گیا ہے۔جنوری 2019میں دہلی اور فروری میں گوا میں ہنرہاٹ کا انعقادممکن ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest