طرحی کلامِ گلشن بیابانی

تجھے سبھی ہیں مصیبت میں ڈالنے والے
لہو پلا کے سنپولوں کو پالنے والے

خدا کرے کہ بہاریں ترے قدم چومیں
ہمارے پاٶں سے کانٹا نکالنے والے

عجیب بات کہ شیشے کے گھر میں رہتے ہیں
ہماری سمت یہ پتّھر اچھالنے والے

ملے گا کیا انھیں ، ساحل سے لوٹ آٸیں جو
کہاں گۓ وہ سمندر کھنگالنے والے

ہمارے صبر کا پیمانہ اب چھلک نہ پڑے
بہت ہوا ، ہمیں وعدوں پہ ٹالنے والے

گرے ہیں سب کی ہی نظروں سے وہ مگر خود کو
سمجھ رہے کہ ہیں وہ سب کو سنبھالنے والے

ہمارے نام سے منسوب ہے ، یہی گلشن
کہ ہم ہیں زخموں کو شعروں میں ڈھالنے والے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram