گورنر ستیہ پال ملک نے جموں و کشمیر کے موجودہ حالات پر کیا کہا؟؟

جموں و کشمیر کے گورنر نے کہا کہ میں نے دہلی میں سبھی سے بات کی ہے اور کسی نے بھی مجھے کوئی اشارہ نہیں دیا ہے کہ ہم ایسا کریں گے یا ویسا کریں گے ۔ کسی کا کہنا ہے کہ ٹرائیفرسیشن ہوگا تو کوئی کہتا ہے کہ آرٹیکل 35 اے ، یا 370 ہٹے گا ، وزیر اعظم مودی یا وزیر داخلہ امت شاہ نے یا کسی اور نے بھی میرے ساتھ ان باتوں پر گفتگو نہیں کی۔گورنر نے کہا کہ کل کے بارے میں تو مجھے کچھ نہیں معلوم ، یہ میرے قابو میں نہیں ہے ۔گورنر ستیہ پال ملک نے کہا کہ یہ ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنے سبھی شہریوں کو تحفظ فراہم کرے ، اس لئے احتیاطی قدم کے طور پر یاتریوں اور سیاحوں کو لوٹنے کیلئے کہا گیا ہے ۔ گورنر نے ریاست کی سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں سے کہا کہ وہ اپنے حامیوں کو پر امن رہنے اور وادی میں بڑھ چڑھا کر پھیلائی گئی افوہوں پر یقین نہ کرنے کیلئے کہیں ۔
وہیں عمر عبد اللہ سے ملاقات کے بعد راج بھون سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ گورنر نے سابق وزیر اعلی کی قیادت میں ایک وفد کو بتایا کہ سیکورٹی صورتحال اس طرح سے پیدا ہوگئی ، جس پر فوری کارروائی کی ضرورت تھی ۔ امرناتھ یاترا پر دہشت گردانہ حملوں کے تعلق سے سیکورٹی ایجنسیوں کو قابل اعتماد جانکاری ملی تھی ۔ ایل او سی پر پاکستان کی جانب سے گولہ باری میں اضافہ ہوا ، جس کا ہندوستانی فوج کی جانب سے بھی معقول طریقہ سے جواب دیا گیا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest