غزل

آج پھر تیرے گھر میرا جانا ہوا
دل کی تسکین کا اک بہانا ہوا

تیری یادوں کا ساون برسنے لگا
تجھ سے بچھڑے ہوئےاک زمانہ ہوا

میری نظروں نے چپکے سے برسائے گل
شہرِ دل سے وہ جب بھی روانہ ہوا

جب سے مالی نے چھوڑی ہے فکرِ چمن
زرد موسم کا بس أنا جانا ہوا

تتلیوں سے پتہ اس کا پوچھا مگر
کچھ نہ معلوم اس کا ٹھکانہ ہوا

تب سے عنبر بھی أشعار کہنے لگی
گھر کا ماحول کچھ شاعرانہ ہوا

عارفہ مسعود عنبر مراداباد

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest