غزل .ناز خان

 

غزل۔ناز خان
غزل۔ناز خان

غزل

میری آنکھیں شراب جیسی ہیں
یعنی باالکل جناب جیسی ہیں

ایسا لگتا ہے شب کو جاگے ہو
آج آنکھیں گلاب جیسی ہیں

تجھکو کیسے میں بھول سکتی ہوں
تیری یادیں ثواب جیسی ہیں

میرے دل میں تو چاہتیں تیری
عین عزتِ ماب جیسی ہیں

تجھ سے ہو کر جدا قسم سے مری
حالتیں اب خراب جیسی ہیں

بِن تمہارے تو ناز کے دن بھی
اور راتیں عذاب جیسی ہیں

ناز خان

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *