دہلی اردو اکادمی کے زیر اہتمام ڈرامہ فیسٹیول کا انعقاد۔ادب و تہزیب کا امتزاج

اکادمی کے تمام پروگرام بشمول ڈرامافیسٹول اہم اورتہذیب کے فروغ کاسبب:عمران حسین
فیسٹول کے تمام ڈرامے جمہوری قدروں کی اہمیت کواجاگرکرنے والے:ایس ایم علی
اردواکادمی ،دہلی کے زیراہتمام سری رام سینٹر،منڈی ہاؤس،نئی دہلی میں ۳۱ویں سالانہ ڈرامافیسٹول کاانعقادکیاگیا۔استقبالیہ خطاب کرتے ہوئے اردواکادمی،دہلی کے سکریٹری ایس ۔ایم۔ علی نے کہاکہ اردواکادمی ،دہلی کی جانب سے یہ ۳۱واںاردو ڈرامافیسٹول منعقدکیاجارہاہے۔درجنوں ڈرامے شرکت کے لیے ہمارے پاس آتے ہیں ،لیکن ہم آپ کے لیے بہت اچھے اورمنتخب ڈرامے لاتے ہیں تاکہ آپ سب پوری طرح لطف اندوزہوسکیںاوراردوتہذیب سے واقفیت بھی ۔اردواکادمی،دہلی کی کوشش ہوتی ہے کہ اردو اور اردوتہذیب کے فروغ کوہرحال میں یقینی بنایاجاسکے ۔اس فیسٹول میں پیش کیے جانے والے تمام ڈرامے اردو،اردوتہذیب،قومی یکجہتی اورجمہوری قدروں کی اہمیت کواجاگرکریں گے ۔اردوڈرامافیسٹول کی شہرت صرف اردوداں طبقے تک محدودنہیں اس فیسٹول کاانتظارعوام اورغیراردوداں طبقے کوبھی ہوتاہے۔ اس فیسٹول کی کامیابی کی اس سے بڑی دلیل اورکیاہوسکتی ہے ۔
دہلی کے وزیربرائے خوراک ورسدعمرا ن حسین نے مہمان اعزازی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ اردو اکادمی کی جانب سے کیے جانے والے کام بہت اہم ہیں۔ پورے ہندوستان میں دہلی کی اردواکادمی سب سے اہم اکادمی ہے۔اردواکادمی کی جانب سے منعقدہونے والے تمام پروگراموں میں دہلی کے عوام شریک ہوتے ہیں اور اردو کے پروگراموں سے لطف اندوزہوتے ہیں اور اس سے سیکھتے ہیں ۔مجھے امید ہے کہ ڈراما فیسٹول میں شرکت کرنے والے تمام ڈراموں سے لطف اندوزہوں گے ۔آج کا ڈراما بہت اہم ہے چوں کہ یہ ڈراما ’زنجیرکانغمہ‘ ہندوستان کے آخری تاج داربہادرشاہ ظفرکی تاج پوشی اوران کے عہدکوپیش کرتاہے ۔
۳۱ویں ڈرامافیسٹول کے پہلے دن دہلی کے وزیرعمران حسین اورڈراما کے ڈائرکٹرکااستقبال گلدستہ پیش کرکے کیا گیا ۔اردواکادمی کے زیراہتمام منعقدیہ اردوڈرامافیسٹول ۲۹؍نومبرتک ہرشام ساڑھے چھ بجے منعقدہواکرے گا۔
۳۱ویں ڈرامافیسٹول کے پہلے روزڈراما ’زنجیرکانغمہ‘پیش کیا گیا ۔جسے معروف افسانہ نگارانجم عثمانی نے تحریرکیاہے ۔اس ڈرامے کے ڈائرکٹراروندسنگھ ہیں۔اس ڈرامے میں بہادرشاہ ظفرکی تاج پوشی ،ان کے شاعرانہ مزاج ،اس عہدمیں غداری ،آخری بادشاہ کے عہدکے سیاسی حالات ،بادشاہ کی لاچاری،بادشاہ کوقیدمیں ڈالاجانا،بادشاہ کے خلاف انگریزکورٹ کافیصلہ ،رنگون میں بادشاہ کی جلاوطنی ان مسائل پرڈرامے میں روشنی ڈالی گئی اورمناظرپیش کیے گئے جسے ناظرین نے پسند کیا۔
ڈرامافیسٹول کے پہلے روز معززین شہر،جامعات کے طلباوطالبات ،دہلی میں مقیم ڈراماتھیٹروں سے متعلق افراداورڈرامے شائقین کے علاوہ بالخصوص پروفیسر ابن کنول، ڈاکٹر جی۔ آر۔ کنول، انجم عثمانی، ڈاکٹر عقیل احمد، ڈاکٹر ریاض عمر، یوگراج ٹنڈن،اردواکادمی،دہلی کے ممبرفریدالحق وارثی اورفرحان بیگ اوراردواکادمی کے تمام اسٹاف شریک تھے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *