دہلی پولیس کا بچھڑے بچوں کو ملوانے کا آپریشن ملاپ

نئی دہلی:انسانی اسمگلنگ کے بڑھتے واقعات کے درمیان قومی دارالحکومت دہلی کی پولیس نے اپنوں سے دور ہو چکے بچوں کواپنوں سے ملوانے کے لئے ’آپریشن ملاپ‘ شروع کیا ہے۔ اس میں بچوں کی تعداد زیادہ ہے جو کسی کے جھانسے یا ناراضگی میں آکر پریوار سے دور ہو گئے ہیں۔ کرائم برانچ نے اس آپریشن کے تحت ملک کے مختلف حصوں سے 333 بچوں کو ان کے اہل خانہ سے اب تک ملوایا ہے۔ دہلی پولیس مختلف مقامات سے بچوں کو برآمد کرکے بچوں کی تصاویر اور دیگر معلومات ویب سائٹ پر اپ لوڈ کرتی ہے، جس سے پریوار کے لوگ بچوں تک پہنچ سکیں۔ زیادہ تر بچوں کو نوکری کا جھانسہ دے کر یا بہلا پھسلا کر لایا جاتا ہے اور ان بچوں کو ہیومن ٹریفکنگ سے منسلک گروہوں کی طرف سے ریلوے اسٹیشن، بس اڈے، بھیڑ بھاڑ والے دیگر مقامات پر سڑک کنارے بھیک مانگنے کے دھندے میں دھکیل دیا جاتا ہے۔ آپریشن ملاپ کے تحت یکم جنوری سے 7 جولائی کے درمیان پریوار سے ملواے گئے 333 بچوں میں سے زیادہ تر بچے مغربی اتر پردیش، بہار، اڑیشہ سے ہیں۔ پولیس نے دہلی کے 57 لوگوں کو بھی ان کے بچھڑے اپنوں سے ملوایا ہے۔ان میں 14 نابالغ اور 37 خواتین ہیں، جنہیں نوکری کا جھانسہ دیا گیا تھا۔ ہزاروں بچوں کا اب بھی نہیں ہے پتہ ہزاروں بچے اب بھی لاپتہ ہیں، تنہا دہلی کی بات کریں تو سال 2019 میں ابھی تک 2324 بچوں کی گمشدگی کی شکایت درج کی گئی ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram