دہلی میں کسانوں کی تحریک ختم، لوٹ رہے ہیں گھر

این ایچ ۲۴؍ پر گاڑیوں کی آمدورفت شروع

نئی دہلی: دہلی ۔این سی آر کے باشندگان کے لیے راحت کی خبر ہے۔ کسانوں نے اپنی تحریک ختم کردی ہے۔ سارے کسان دہلی یوپی بارڈر سے رات میں ہی پہلے کسان گھاٹ آئے اور اسکے بعد اب کسان گھاٹ سے تحریک ختم کرکے گھر کی طرف لوٹ رہے ہیں۔ این ایچ چوبیس کو دونوں طرف سے گاڑیوں کی آمدورفت کے لیے کھول دیاگیا ہے۔ حالانکہ احتیاط کے پیش نظر غازی آباد کے اسکولوں کو بند رکھنے کردیا ہے۔ کسانوں کے گزرنے والے راستوں پر پولیس خاص نظر رکھی ہوئی ہے۔تفصیلات کے مطابق کسانوں کی یہ یاترا 23 ستمبر کو ہری دوار سے شروع ہوئی تھی جو 2 اکتوبر کو سابق وزیر اعظم اور کسان لیڈر چودھری چرن سنگھ کی اسمرتی استھل ” کسان گھاٹ ” پر ختم ہوئی۔
واضح رہے کہ ہندوستانی کسان یونین ( بی کے یو) کسان کرانتی پد یاترا دہلی کے کسان گھاٹ پہنچ کر بدھ کو ختم ہو گئی ۔ اس سے پہلے منگل کو کسان کرانتی یاترا کو پولیس نے یوپی ۔ دہلی بارڈر پر روک دیا تھا لیکن دیر رات کسانوں کو دہلی میں اینٹری کی اجازت مل گئی ہے جس کے بعد کسان لیڈر چودھری چرن سنگھ کی اسمرتی استھل کسان گھاٹ پہنچے۔
اس سے پہلے دن میں غازی پور کے پاس پولیس نے کسانوں کو روکنے کیلئے آنسو گیس کے گولے بھی چھوڑے۔ وہیں کسانوں کی صرف 11 مانگیں تھیں لیکن حکومت نے اب تک 7 مسائل مدعوں پر حامی بھری ہے۔ 4مدعے ابھی بھی اٹکے ہیں۔اس کو لیکر ہندستانی کسان ہونین (بھاکیو) کے صدر راکیش سنگھ ٹکیت نے کہا کہ حکومت کی منشا کسانوں کی بات ماننے کی نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت کے ساتھ کانفرنس ناکام رہی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest