کانگریس کے سینئر لیڈران نے آپسی ٹکرائو کی تردید کی

دگ وجے سنگھ اور جیوترادتیہ سندھیا نے کانگریس صدر راہل گاندھی کی موجودگی میں ہونے والی میٹنگ میں ٹکٹوں کی تقسیم کے سلسلے میں باہمی ٹکراؤ سے متعلق خبروں کو مسترد کر دیا

بھوپال:اس چہار جانب الیکشن مہم تیز تر ہوتی جارہی ہے۔ آج کل سیاسی پارٹیوں کے لیڈران اپنی اپنی سرگرمیاں تیز کردی ہیں۔ اسی بیچ پارٹیوں کی تلخیاں بھی سامنے آنے لگی ہیں۔ ابھی کچھ دنوں پہلے مدھیہ پردیش میں کانگریس کے لیڈران کے بیچ تلخی سامنے آئی تھی، جس میں کانگریس کے سینئر لیڈر دگوجے سنگھ ناراض نظرآرہے تھے۔ لیکن اب دگ وجے سنگھ اور جیوترادتیہ سندھیا نےاپنی اپنی صفائی بھی دے دی ہے۔
دراصل سوشل میڈیا اور سیاسی حلقوں میں کل دن بھر یہ خبر چلتی رہی کہ دہلی میں دو دن پہلے کانگریس صدر مسٹر گاندھی کی رہائش گاہ پر منعقدہ مرکزی انتخابی کمیٹی کی میٹنگ میں ٹکٹ کی تقسیم کے لئے ان دونوں رہنماؤں کے درمیان تیکھی بحث ہوئی تھی اور معاملہ ٹھنڈا کرنے کے لئے مسٹر گاندھی کو مداخلت کرنی پڑی ۔ خبروں میں یہ بھی کہا گیا کہ اسی تنازعہ کے بعد مسٹر گاندھی نے ٹکٹوں کی تقسیم سے متعلق کاموں کو حتمی شکل دینے کے لئے ایک تین رکنی کمیٹی بنائی ہے۔
تفصیلات کے مطابق مدھیہ پردیش کانگریس کے دونوں لیڈروں دگ وجے سنگھ اور جیوترادتیہ سندھیا نے کانگریس صدر راہل گاندھی کی موجودگی میں ہونے والی میٹنگ میں ٹکٹوں کی تقسیم کے سلسلے میں باہمی ٹکراؤ سے متعلق خبروں کو مسترد کر دیا ۔ مسٹر سندھیا نے کل دیر رات اس بارے میں ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا میں ان کے اور مسٹر سنگھ کے درمیان ٹکراؤ کی خبریں بے بنیاد اور جھوٹی ہیں۔ کانگریس کے تمام لوگ ایک ہوکر ریاست سے بھارتیہ جنتا پارٹی حکومت کا تختہ الٹنے کے لئے پرعزم ہیں۔ اس سے پہلے مسٹر دگ وجے سنگھ نے بھی کل دیر شام ٹویٹ کے ذریعے اس سلسلے میں اپنی وضاحت دی تھی۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا میں اس بات کی غلط خبر چلائی جا رہی ہے کہ ان کے اور مسٹر سندھیا کے درمیان تکرار ہوئی اور مسٹر گاندھی کو اس میں مداخلت کرنی پڑی ہے۔ سینئر کانگریس لیڈر نے کہا کہ ریاستی کانگریس میں ہم سب ایک ہیں اور ریاست کی بدعنوان بی جے پی حکومت کو اکھاڑ پھیکنے کے لئے مصروف عمل ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *