کانگریس کا مرکزی حکومت پرالزام، انل امبانی کی کمپنی کو حکومت کے دبائو کی وجہ سے ٹھیکہ ملا

نئی دہلی: مرکز کی مودی حکومت پر ایک بار پھر کانگریس نے الزام عائد کیا ہے کہ انل امبانی کی کمپنی کو رافیل طیارے کا ٹھیکہ حکومت کی دبائو کی وجہ سے ملا ہے۔ رافیل معاملے میں مرکزی حکومت گھرتی ہی چلی آرہی ہے۔ اس معاملے میں کانگریس صدر راہل گاندھی نے بھی کئی بار وزیراعظم مودی پر حملہ کرتےہوئے کہا تھا کہ رافیل طیارے میں ہوئی بدعنوانی عالمی بدعنوانی ہے۔ یہ آنے والے دنوں میں بی جے پی کے لئے یہ ایک بڑا بحران بنے گی۔ایک بار پھر کانگریس نے الزام عائد کیا ہے کہ قرض میں ڈوبی صنعت کار انل امبانی کی کمپنی کو رافیل طیارے سے متعلق ٹھیکہ حکومت کے دباؤ کی وجہ سے ملا ہے۔کانگریس ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے آج یہاں پارٹی کی پریس کانفرنس میں کہا کہ اگر حکومت کا دباؤ نہ ہوتا تو رافیل طیارے کا سودا طے ہونے سے محض 12 دن پہلے ہی امبانی کی غیرتجربہ کار کمپنی کو یہ ٹھیکہ نہ ملتا۔انہوں نے میڈیا رپورٹوں کا حوالہ دیا اور کہا کہ ان خبروں سے اس سودے کے دباؤ میں ہونے کی تصدیق ہوتی ہے۔ خبروں میں کہا گیا ہے کہ رافیل سودے پر دستخط ہونے سے دو دن پہلے انل امبانی کی کمپنی ریلائنس انٹرٹینمنٹ نے فرانس کے اس وقت کے صدرفرانسوا اولاند کی شراکت دار جولی گايٹ کی فلم بنانے والی کمپنی کے ساتھ معاہدہ کیا تھا۔ترجمان نے اس سلسلے میں وزیر اعظم نریندر مودی سے سوال کیا اور کہا کہ انہیں بتانا چاہئے کہ جس صنعت کار کی کمپنی کو ٹھیکہ دیا گیا وہ ان کے ساتھ فرانس کے دورے پر جاتے ہیں لیکن وزیر دفاع اس دوران ان کے ساتھ نہیں ہوتے ہیں۔ انہیں یہ بھی بتانا چاہئے کہ حکومت علاقے کی کمپنی ایچ اے ایل سے چھین کر اس ٹھیکہ کو ایک پرائیویٹ کمپنی کو کس بنیاد پر دیا گیا جبکہ کمپنی کا مالک پہلے ہی 45 ہزار کروڑ روپے کے قرض میں ڈوبا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram