غزل

کہاں کچھ بات اکبر بولتاہے
وہ چپ رہتاہے،اصغر بولتا ہے

اگرچہ کم ہی رہبر بولتا ہے
یہ سچی بات منھ پر بولتا ہے

خدا نےشہرتوں سے کیا نوازا
بہت مغرور ہو کر بولتا ہے

گواہوں کی ضرورت کیا ہے بھائی
“مری آنکھوں میں منظر بولتاہے

زمانے میں بہت بدنام ہے وہ
جو سچی بات منھ پر بولتاہے

کہاں آقا کا کوئی بھی ہے ثانی
یہی مٹھی کا کنکر بولتاہے

مرے بارے میں میرا بھائی اکثر
نہ جانے کیاکیا گھر گھر بولتاہے

نشانے پر مرے ہے بس مسلماں
یہی بھارت کا اجگر بولتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہبر گیاوی۔۔۔۔۔۔۔۔۔آبگلہ،گیا(بہار)
موبائل 8507854206

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest