بی جے پی کی فتح کے تحفے میں اندور کے قدآوررہنما کیلاش وجے ورگیہ کو مل سکتا ہے صدارتی تاج

شیرنی کے منھ میں پنجہ ڈال کر مغربی بنگال سے بی جے پی کو 18؍سیٹیں دلاکر بی جے پی کے قومی صدر امیت شاہ اور ہندوستانی وزیراعظم نریندر مودی کے نور نظربنے کیلاش وجے ورگیہ کو پارٹی کے قومی صدر کی ذمے داریوں کا تاج پہنانے کی چرچا سیاسی گلیاروں میں شدت کے ساتھ جاری ہے، سیاسی پنڈتوں کے مطابق اندور کے قدآوررہنما اور بی جے پی کے قومی جنرل سیکریٹری جناب کیلاش وجے ورگیہ کی تنظیمی امور کی صلاحیتوں کوپارٹی صدر امیت شاہ اور ہندوستانی وزیراعظم نریندرمودی نے سراہاہے اورچوں کہ بی جے پی میں ایک فرد،ایک عہدہ کی روایت رہی ہے، اورپارٹی کے قومی صدر کے پاس ہندوستان کے وزیرداخلہ کاقلم دان بھی ہے لہٰذا وہ اپنی صدارتی ذمے داری اپنے کسی چہیتے کو دے سکتے ہیں اور ان میں اندور کے کیلاش وجے ورگیہ کانام سر فہرست بتایاجارہاہے حالانکہ اس عہدے کی دیس میں جے پی نڈااور بھوپیندریادو کانام بھی شامل بتایا جارہا ہے، اور تینوں ہی لوگ انتخابی مینیجمینٹ کے گرو،کے طورپر جانے جاتے ہیں ،ویسے بھی ایم پی کے سابق وزیراعلیٰ اور کیلاش وجے ورگیہ میں قدآوری کی لڑائی ہمیشہ رہی ہے، کیلاش وجے ورگیہ کو صدارتی ذمے داری ملنے سے پارٹی کو مضبوطی ملنے کی امید یں ہیں،اب دیکھنا یہ ہے پارٹی صدارتی تاج کیلئے کس کو مناسب مانتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest