جانیں اے پی جے عبد الکلام صاحب کے بارے میں کچھ خاص باتیں!

ہندوستان کے سابق صدر اور معروف جوہری سائنس دان، جو 15 اکتوبر1931ء کو ریاست تامل ناڈو میں پیدا ہوئے، اور 27 جولائی 2015ءکو دل کا دورہ پڑنے سے ان کا انتقال ہوا۔ عبد الکلام ہندستان کے گیارہویں صدر تھے، انہیں ہندوستان کے اعلٰی ترین شہری اعزازات پدم بھوشن، پدم وبھوشن اور بھارت رتن بھی ملے۔ عبد الکلام کی صدارت کا دور 25 جولائی 2007ء کو اختتام پزیر ہو۔ا
میزائل مین ، اے پی جے عبدالکلام کا ملک ہمیشہ شکر گزار رہے گا۔ 2020 تک ، ہندوستان کو مالی طور پر خوشحال بنانے کا خواب دیکھنے والے یہ کرم ویر یودھا مرتے دم تک ملک کے لئے کا م کرتے رہیں۔ آج ان کی برسی ہے۔ آخری لمحوں میں وہ بچوں کو لیکچر دے رہے تھے۔ آئیے ان کی زندگی کے وہ خاص پہلو جانتے ہیں جن کو شاید آپ نہیں جانتے ہوں گے۔

کچھ ایسے تھے وہ آخری لمحے
چارسال قبل 27 جولائی کو ان کا انتقال میگھالیہ کے شہر شلنگ میں ہوا تھا۔ یہاں وہ لیکچر دینے گئے تھے ۔ کلام نے اپنے آخری کچھ گھنٹے ایسے گزارے جو یاد گار ہیں۔ ان کی آخری خواہش ،ا ن کی آخری الفاظ، سب ہمیں بتاتے ہیں کہ وہ ملک کے لئے کتنا سوچتے تھے۔ ہندوستان کی (اگنی) میزئل کو اڑانے والے مشہور سائنس داں عبدالکلام 83 برس کی عمر میں،27 جولائی 2015ء بروز پیر شیلانگ میں ایک تقریب کے دوران سابق ہندوستانی صدر کو اچانک دل کا دورہ پڑا جس سے وہ وہیں گرپڑے اور انہیں انتہائی تشویشناک حالت میں فوری طور پر اسپتال منتقل کیا گیا لیکن وہ جانبر نہ ہوسکے اور دم توڑ دیا۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *