اپرادھی ناول کی کہانی پڈھنے والے کو یہ کہانی اپنی کہانی محسوس ہوگی:ابد شمیم

آگرہ:نئی دہلی ، فیڈریشن فار گلوبل کلچر کی جانب سے کنسٹیٹیوشن کلب میں منعقد ایک شاندار تقریب کے دوران ہندی ناول اپرادھی کا اجرا سینئر ادیب گنگاپرساد ومل کی صدارت کیا گیاا،اسسٹنٹ کمشنر جی ایس ٹی کپل عیساپری کے مصنف ناول ابرادھی کے رسم اجرا کے موقع پرمہمانی خصوصی کی حیثیت سے شازییہ علمی سے اُور دیگر تمام صحافی اور سینئر ادیب نے شرکت کی ۔ناول کے موضوع پر کپل نے کہا کہ یہ ناول مذہبی قید کو توڈ کر کیئے گئے ایک دِل کو چھو لینے والی شادی کی کہانی ہے، ناول کااداکار شویندر اُور اداکارا نوشین نازک حالات میں بھی محبت اور قربانی کی ایک منفردمثال پیش کرتے ہیں، ناول میں خاندان کے مسئلہ ، وسائل صارفین کی ثقافت کی خامیوں کو بھی بہت دلچسب طریقہ سے پیش کیا گیا ہے۔
ادیب گنگاپرساد ومل نے کہا کہ اس ناول کے موضوع اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔ ایک بار پڈھنا شروع کرتے ہیں تو چھوڈنے کا دل ہی نہیں کرتا ۔ ادیب مشروف عالم جاکی نے ناول کو روسی ناول نگار دوست جاکی سواتی کے ناول کرائم اینڈ پنشمینٹ کا حوالہ دیتے ہوئے اپرادھی کے موضوع کو بہتر بتایا۔کمیشن آف انشانی حقوق کے رکن جیوٹکا کلرا نے کپل کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ یہ ناول معاشرہ کے لئے پیغام ہے۔
شازییہ علمی نے کہا کہ ناول کی کہانی دل کو چھو لینے والی ہے، اس ناول سے پیغام حاصل ہوتا ہے کہ محبت مذہب اور فرقہ سے اُپر ہے۔اس موقع پر تقریب کے آرگنائزر فیڈریشن فار گلوبل کلچر کے سیکرٹری جرنل طارق فیضی نے کہا کہ کپل عیساپری نے اپنی مصروفیت کے ناوجود جس طرح سے ناول لکھا ہے وہ اپنے آپ میں تعریف کے لائق ہے، اس لئے ہماری کوشش ہے کہ اس ناول میں موجود پیغام ملک کے ہر حصہ میں جائے۔
سیشن ضلع جج باغپت ابد شمیم نے کہا کہ اس ناول کی کہانی پڈھنے والے کو شویندر اُور نوشنن کی نہ ہوکر اپنی کہانی محسوس ہوگی،یہ اس ناول کی خوبی ہے۔اس کے بعد طارق نے تقریب میں شریک تمام کا شکریہ ادا کیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest