آل انڈیا مشاعرہ اور اعزازیہ تقریب کاانعقاد

حرف حرف آئینہ سوسائٹی ،بزم ناسخ اور تحریم ایجوکیشنل سوسائٹی برھانپور کے زیراہتمام ایک آل انڈیا مشاعرہ اور کرناٹک اردو اکیڈمی بنگلور کے چیئرمین اور درجہ وزیر مملکت جناب مبین منوراور جناب ٹھاکر سریندرسنگھ المعروف شیرابھیاکے ممبر اسمبلی منتخب ہونے پر اعزازیہ تقریب کاانعقاد جناب راکیش شرمااور استاد لطیف شاہدکی سرپرستی میں اور پیرزادہ سیّد مصطفی علی ساگر کی صدارت میں منعقد ہوا،سٹیج کاافتتاح حسب اعلان مومن جماعت کے صدر شاہ پرویز سلامت کے ذریعے اور شمع افروزی سیّد فرید سیٹھ کے ذریعے کیا گیا،اس موقع پر مہمان خصوصی کے طورپر دھلی کی نامور شخصیت سیّد ضیاء الحسن المعروف بھائی پارے مومن جماعت کے نائب صدر الحاج عارف انصاری علیگ اور مومن جماعت کے سیکریٹری الحاج ایڈوکیٹ شاہد انصاری ،الحاج ملک سیٹھ مالیگائوں والے ،نور قاضی ،ڈاکٹر ایس ایم شکیل اورفہیم ہاشمی نے شرکت کی،اس موقع پر کرناٹک اردو اکیڈمی بنگلور کے چیئرمین مبین منور اور برھانپور کے ممبراسمبلی جناب ٹھاکر سریندرسنگھ المعروف شیرابھیاکااعزازواستقبال مومن جماعت کے صدر شاہ پرویز سلامت کے ذریعے تمام مہمانوں کی موجودگی میں کیاگیا،پروگرام کے آغاز کے ساتھ مہمانان اور شعراء اکرام کااعزازواستقبال نعیم راشد،ایڈوکیٹ شمیم آزاد،ڈاکٹر فوزیہ فرحانہ ،اقبال انصاری آئینہ ،تفضیل تابش ، ظہیر انور ، نعیم نواز،افضال دانش ،تاج محمد تاج ،نعیم تاج وغیرہ کے ذریعے کیاگیا،بیرونی شعراء میں ڈاکٹر ماجد دیوبندی ،انادھلوی ،مبین منور،فاروق جائسی ،شیخ حبیب ،زاہد کونچوی ، سعید احسن ،زبیرگورکھپوری ،وسیم راجیوپوری، غفران امجد،ضمیر ریتھ پوری،حنیف عاشق،راوت بھاٹا،فاروق رضائ، آرزو اشکی،عمران فیض ناگ پوری، اشفاق مارولی،مائل پالدھوی اورمیزبان شعراء میں نعیم تاج ،تاج محمد تاج،نعیم نواز،ظہیر انور،افضال دانش ،کمال انصاری(کویت)،ڈاکٹر جلیل،تفضیل تابش،نعیم راشدنے اپنے کلام سے نوازا، جناب مبین منور کی نعت پاک سے مشاعرے کاآغاز ہوا،مشاعرہ شب میں 11:30بجے سے شروع ہوکر علی الصبح 5بجے اختتام پذیر ہوا، ابتدائی نظامت ڈاکٹر جلیل برھانپور نے فرمائی اور نظامت شفیق عابدی نے فرمائی، رسم شکریہ اقبال انصاری نے اداکیا،مشاعرے میں ملک کے معروف شعراء کے کلام کو سننے کیلئے عوام کاجم غفیر موجودتھا،وہیں اس مشاعرے میں ٹھاکر سریندرسنگھ کے ذریعے عوام الناس کاشکریہ اداکرنے کے دوران آنسو چھلک پڑے،انہوں نے پھردہرایا کہ میں عوام الناس کایہ فرض کیسے اتاروں گا،انہوں نے کہاکہ ایم ایل اے منتخب ہونے کے بعد سے وہ اپنی مصروفیات اور عوام کی خدمت کے جذبے کی وجہ سے اپنے اہل خانہ کے افراد سے بھی نہیں مل پارہے ہیں اور رات میں بمشکل 4گھنٹے ہی سوپاتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram