افسانوی مجموعہ’ درد کے سائے‘ کاانصاری اسلامک کلچرل سینٹر میں اجراء

گیان چند کینتھ اگر اپنا ادبی تخلیقی سفر جاری رکھیں گے تو کارآمد نتائج ثابت ہوںگے : نند کشور وکرم

دہلی :اسٹاف رپورٹر۔ اردو دوست معروف افسانہ نگار گیان چند کینتھ نشتر دہلوی کے افسانوی مجموعہ’درد کے سائے‘ کا اجراء سینئر صحافی و ادیب نند کشور وکرم کے ہاتھوں انصاری اسلامک کلچرل سینٹر6/275للیتا پارک لکشمی نگر دہلی میں ہوا۔نند کشور وکرم نے نشتر دہلوی کے لئے دعائیہ کلمات کے ساتھ کہاکہ اگر اپنے ادبی تخلیقی سفر کو جاری رکھیں گے،تو اس کے نتائج کار آمد ثابت ہوں گے۔ صدارت ممتاز افسانہ نگار مشر عالم ذوقی نے کی جبکہ نظامت کے فرائض شیام سندر سنگھ نے انجام دیئے ۔ ابتدا میں مہمان خصوصی شاعروناقد عمران عظیم ایڈوکیٹ، معروف ادیب فاروق ارگلی اورنو جوان ادیب و صحافی حبیب سیفی تھے۔تقریب کے صدرمشرف عالم ذوقی نے کہا گیان چند کینتھ نشتر دہلوی کی خوش قسمتی ہے،کہ انھیں اس ادبی سفر میں اطہر انصاری (ساحر داود نگری )ملے ،اور نشتر دہلوی کی کتاب شائع کراکے اردو کی گنگا جمنی تہذیب کے دھارے میں جو رکاوٹ ہوتی دکھ رہی تھی اس میں تیزی لانے کا کام کیا۔ شاعر و ناقدعمران عظیم ایڈوکیٹ نے کہا نشتر دہلوی 1960سے پہلے انجام دے رہے ہیں، نتیجہ میں ان کی کتاب’ درد کے سائے‘کو تشکیل دی، دنیاوی درد کے سائے سے نجات کی تدبیریں اپنے افسانوں میں نشتر دہلوی نے پیش کی ہیں۔معروف ادیب فاروق ارگلی نے بھی موصوف افسانہ نگار کو آئندہ بھی اس سفر پر چلنے کی دعائیں دیں، اور کہا کہ ایسے مشترکہ تہذیب کے متوالوں سے ہی ہندوستان کی خوبصورتی میں اضافہ ہوتا ہے۔ ادیب وصحافی حبیب سیفی نے کہا،کہ ’درد کے سائے‘ افسانوی مجموعہ میں قدروں کے زوال، قوموں کے انتشار ، اور ذہنوں کے خلفشار کے ساتھ انسانیت کا درد کثرت سے پایا جاتا ہے ،آپکی اردوسے دوستی موجودہ حالات میں بڑی چیز ہے۔ بزرگ نشتر دہلوی کی پوتی امریتا کینتھ نے بھی اردو سے والہانی محبت کاثبوت اظہار خیال کر کے دیا۔ اس موقع پر شرکاء نے کہااگرکینتھ جیسے گھرانوں میں ایسے اردو کے چاہنے والے ہیں توہمیں امید ہے دنیا میں اردو پھلتی پھولتی رہے گی ۔ تقریب میں شامل شمس الضحیٰ ایڈیٹر آئینہ انڈیا،مشہور صحافی افتخار قریشی ،سینئر صحافی ساجد عبید، ارشد حسین اور اصناف ادب پر کام کرنے والے دانشوران کثیر تعداد میں شامل تھے، جنہوںنے درد کے سائے کی اشاعت پر مصنف گیان چند کینتھ کو مبارکباد پیش کیں ۔آخر میںپروگروام کے کنوینر اطہر انصاری نے تمام شرکا کا شکریہ ادا کیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram