کیا 2019میں آڈوانی کی طرح مودی کوبھی کنارا کردیا جائے گا؟

 

زین ہاشمی ندوی
ایک مدت گزری ایک شخص آڈوانی جی کے ساتھ تھا ، ان کا ہم نوا ہو کر ، ان کے ساتھ رہ کر ، ان کی خدمت کرکے ، اپنے آپ میں ایک فخر محسوس کرتا تھا ، جس نے آڈوانی جی کے بتائے ہوئے راستے پر عمل کرنے میں اپنی زندگی کا اصل مقصد سمجھا تھا، لیکن وقت ہمیشہ ایک ایسی کروٹ لیتا ہے جو کروٹ لوگوں کے وہم و گمان میں بھی نہیں ہوتی ، اسی طرح وقت نے کروٹ لی اور اس کروٹ میں بہت سوں کے دن بدل گئے بہت سوں کے مستقبل سنور گئے، ارو بہت سے تاریکی میں جا پہنچے۔
کل تک آڈوانی جی جو ہندوتوا کا ایک عظیم اور جانا پہچانا چہرہ سمجھے جاتے تھے، اب وہ بالکل کنارے کر دیئے گئے ہیں اڈوانی جی نے ایک خاص موقع پر ایک خاص شخص کی اتنی زبردست وکالت کی اور جس کی وکالت کی اسی شخص نے ان کو کنارے کر دیا، اور اب آڈوانی جی کے پرانے ہو گئے ہیں، ان کا وقت ختم ہو گیا ہے ، انہوں نے اپنی زندگی میں جو کرنا تھا کر لیا ، اب وہ شاید اپنی زندگی کے باقی ماندہ ایام کاٹ ہی رہے ہیں، لیکن جس شخص نے ان کو کنارے کر دیا تھا وہ شخص ہندوستان کا وزیراعظم بن گیا ، اور اب 2014 کے بعد سے 2019 تک وزیراعظم کے عہدے پر فائز ہے، لیکن سوچنے والی بات یہ ہے کہ 2019 کے بعد کیا ہو سکتا ہے 2019 کے بعد کیا ان کو بھی اسی طرح کنارے کردیا جائے گا ؟ جس طرح انہوں نے اپنے بزرگ آڈوانی جی کو کنارے کیا تھا ، کیا انہیں بھی ہر طرح کے سیاہ و سفید خارج کر دیا جائے گا ؟ کیا انہیں بھی اسی طرح دھیرے دھیرے مارک درشک منڈل میں ڈال دیا جائے گا ؟
کیا وہ بھی بعد میں ایک کتاب لکھیں گے جس طرح اڈوانی جی نے مائی کنٹری مائی لائف لکھی تھی۔
My Country My Life is an autobiographical book
اور اس کتاب میں انہوں نے اپنے آپ کو ایک معصوم کے طور پر متعارف کرانے کی کوشش کی، اپنے گناہوں پر پردہ ڈالنے کی کوشش کی تو کیا موجودہ وزیراعظم جب وہ سابق وزیراعظم ہو جائیں گے کیا وہ بھی اس طرح کی کوئی کتاب یا اسی طرح کی کوئی نگارش پیش کریں گے ؟ جس سے وہ اپنی شخصیت پر لگے ہوئے داغ اور دھبے دھونے کی کوشش کریں گے۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Pin It on Pinterest

RSS
Follow by Email
Facebook
Twitter
Pinterest
LinkedIn
Instagram