72 سال سےبعد بند پڑی مسجد میں اچانک اللہ اکبر کی صدائیں بلند ہوئیں

نائب شاہی امام مولانا محمد عثمان رحمانی لدھیانوی نے اول نماز ادا کروائی ہندو سکھ بھائیوں نے پرجوش استقبال کیا

نکودر/لدھیانہ ، پنجاب کے نکودر شہر سے متصل گائوں گہیر میں تقسیم ہند کے وقت سے بند پڑی مسجد میں آج 72سال بعد جب اللہ اکبر کی صدائیں بلند ہوئیں تو مسجد میں موجود نمازیوں کی چہرے مسرت سے چمک اٹھے ،اور پھر مدتوں بعد آج پڑھی جانیوالی نماز کی امامت مجلس احرار اسلام ہند کے قائد و پنجاب کے نائب شاہی امام مولانا محمد عثمان رحمانی لدھیانوی نے فرمائی ،اس موقعہ پر جناب محمد کلیم آزاد ممبر پنجاب وقف بورڈ ، مولانا محمد گلفام شنکر ، مولانا فضل الرحمن اصلاح امت ٹرسٹ ، مولانا محمد شکیل مظاہری روپڑ، قاری محمد خرشید شیروانی ، مولانا محمد عمران مجددی و دیگر اہم حضرات موجود تھے ، اس موقعہ پر خطاب کرتے ہوئے نائب شاہی امام مولانا محمد عثمان رحمانی لدھیانوی نے اپنی مادری زبان پنجابی میں اہل علاقہ کے سامنے سیرت رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم پیش کرتے ہوئے کہا کہ اسلام کا مقصد دلوں کو جوڑنا ہے ، نفرتوں کو ختم کر کے محبتوں کو عام کرنا ہے ، نائب شاہی امام مولانا محمد عثمان رحمانی لدھیانوی نے کہا کہ پنجاب میں تقسیم ہند کے بعد جب تمام مساجد ویران ہو گئیں تو حضرت رئیس الاحرار حضرت مولانا حبیب الرحمن لدھیانوی اول مرحوم نے مساجد کی آبادکاری کا سلسلہ جو شروع فرمایا آج اس میں متعدد علماء اور مسلم تنظیمیں خدمات انجام دے رہی ہیں اور یہ اکابرین احرار کی روحوں کے لئے باعث تسکین ہے کہ انکا مشن آج ہر خاص و عام کا مقصد بن گیا ہے ، نائب شاہی امام نے کہا کہ یہ اللہ کریم کا اپنے محبوب صلی اللہ علیہ وسلم کے صدقے پنجاب میں مساجد کی آبادکاری مکاتب کے قیام کا سلسلہ شروع کردیا بلاشبہ اس سارے کام میں علماء کرام کا اہم کردار ہے قوم کو چاہئے کہ وہ اپنے آئمہ اور علماء کا احترام کریں یہ لوگ اپنی ذات کو پیچھے رکھ کر دین محمدی صلی اللہ علیہ وسلم کے لئے کام کر رہے ہیںقابل ذکر ہیکہ اس موقعہ پر جہاں اہل مسجد کی جانب سے لنگر کا اہتمام کیا گیا تھا وہیں گائوں کے ہندو سکھ بھائیوں نے اپنے مسلمان بھائیوں اور خاص کر نائب شاہی امام کا گہیر پہنچنے پر پرجوش استقبال کیا اور ملت اسلامیہ کی خوشی میں شریک ہوئے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *