صدر جمہوریہ نے کہا: اٹل بہاری واجپئی ہندوستانی سیاست میں نئی فکر کے نقیب تھے

نئی دہلی: سابق وزیراعظم اٹل بہاری واجپئی کی موت پر صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند نے کہا کہ وہ ہندوستانی سیاست میں نئی فکر کے نقیب تھے۔ انہوں نے کہا کہ آنجہانی کی کی موت ان کے لئے ’’ذاتی نقصان‘‘ ہے۔ آنجہانی اٹل بہاری واجپئی کی موت ان کے لئے ’’ذاتی نقصان‘‘ ہے۔صدر جمہوریہ نے واچپئی کے ذریعہ گود لی ہوئی بیٹی نمتا کول بھٹا چاریہ کو آج بھیجے ایک تعزیتی پیغام میں کہا کہ’’ اس دکھ کی گھڑی میں میری نیک تمنائیں آپ اور آپ کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں ،اٹل جی کا انتقال آپ کے اور آپ کے اہل خانہ کے لئے یقینی طور پر بڑا نقصان ہے ،یہ میرے لئے بھی ذاتی نقصان ہے‘‘۔انہوں نے کہا کہ’’ ان کے سیاسی قد اور تعظیم کی وجہ سے میں نے اپنے سماجی زندگی میں ان کا انتخاب کیا تھا۔ میں نے ان کا رفیق بننے کے لئے قانونی پیشہ چھوڑ تھا۔ان کے ساتھ کام کرنا میرے لئے ناقابل بیان تجربہ ہے۔سالوں بعد صدر جمہوریہ کے عہدے پر فائز ہونے کے بعد میں نے ا ن سے ملاقات کی تھی تو وہ بیماری کی وجہ سے بستر پر تھے۔اس کے باوجود انہوں نے آنکھوں کے اشارے سے مجھے نیک تمنائیں دی تھیں‘‘۔انہیں بھارت رتن دیا جانا ان کے عزت و تکریم کی بہترین مثال ہےبڑے دل والے اس سیاست داں کی کمی نہ صرف ملک بلکہ دنیا میں بھی محسوس کیجائے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *